سنہرے دن

(نادیہ عنبر لودھی)

Poem Golden Days written by Nadia Umber Lodhi

‏Golden days

——

Wait, Wait , my sweet heart ,

We shall wait for golden days ,

For you, I shall collect spring flowers ,

I shall steal smiles from the lips of an innocent child,

I shall collect few sun rays ,

But you shall wait ,my sweet heart ,

To catch butterflies I can’t look for an aromatic forest,

To walk we can’t go out side,

And I forgot my way finding through the stars ,

I can’t bring dreams for overfilled eyes ,

Read books and watch movies ,

Be a little wait, spring is behind the door ,

“Corona” hinders it and closed the door,

But hoping to be open soon ,

I am waiting and busy in writing ,

I can’t run away from nature ,

We should wait in “Quarantines”.

‏Nadia umber Lodhi

‏.Islamabad

————————

سنہرے دن

———–

تم ٹھہرو ذرا !

تم ٹھہرو ذرا ! میری جان!

ہم سنہرے دنوں کی آمد تک محو انتظار رہیں گے !

تب میں تمہارے لیے بہار کے پھول چُننے جاؤں گی

کسی معصوم طفل کے لبوں سے مسکان چرا لاؤں گی

سورج سے چند نور کی کرنیں بھی لاؤں گی

بس تمہیں محو انتظار رہنا ہوگا !میری جان !

کسی خوشبو بھرے جنگل سے تتلیاں پکڑ نے نہیں جا سکتی میں

تمہارے قدم سے قدم ملا کے سیر کو نہیں جا سکتی میں

اور ستاروں تلے راستے ڈھونڈنا بھی بھول گئی ہوں

ان نیند بھری آنکھوں کے واسطے خواب بھی نہیں لا سکتی میں

کتابیں پڑھو اور فلمیں دیکھو

بس تھوڑی دیر ٹہرو ! بہار بند دروازے کے پیچھے کھڑی ہے

“کرونا “نے دروازہ بند تو کیا ہے

مگر یہ جلد ہی کُھل جاۓ گا

میں منتظر ہوں اور لکھنے میں مصروف ہوں

فطرت سے فرار ممکن نہیں ہے مرے لیے

ہمیں “قرنطینہ “میں محو انتظار رہنا ہوگا

Comments are closed.