حوصلہ دوستو

(عاصم بخاری)

ہے بڑی چیز یہ حوصلہ دوستو

منزلوں کا یہی راستہ دوستو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آتے رہتے ہیں وقت ایسے اقوام پہ

ہے ازل سے یہی قاعدہ دوستو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وقت ہے ساتھ دو یہ گھڑی دو گھڑی

خوف کھانے سے کیا فاٸدہ دوستو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کام گھبرانے سےتو بنے گا نہ یہ

کوٸی بھی جاٸے ناں بوکھلا دوستو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہے یہی استدعا قید گھر میں رہو

اور سب سے رکھو فاصلہ دوستو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حق میں بہتر تمہارے ہے بس اب یہی

دُور ہی سے رکھو رابطہ دوستو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عزم سے جس نے اس کی کمر توڑ دی

سامنے آپ کے چاٸینہ دوستو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

زندہ قوموں کو دیکھا گیا متحد

ہم نے تو بس یہی ہے پڑھا دوستو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہم نے ہی اس وبا کا گلا گھونٹنا

قوم ساری کا ہے فیصلہ دوستو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہاں دوا بھی کریں اور دعا بھی کریں

خوش نہیں ہے یقینا” خدا دوستو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مرد مشکل میں گھبراتے عاصم نہیں

یہ ”کرونا“ ہے کیا، اک وبا، دوستو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Comments are closed.