گریہ کرو کہ شہر کی غمگیں فضا سنے

(سید مشفق رضاؔ نقوی)

گریہ کرو کہ شہر کی غمگیں فضا سنے
گریہ کرو کہ عرش پہ میرا خدا سنے

شب بھر کرو گے گریہ تو رب مان جائے گا
گریہ ہو اس یقین سے رب ہی دعا سنے

بازار، شہر، گاؤں ہیں سنسان وادیاں
بس خامشی کی سسکیاں بادِ صبا سنے

وہ خوف ہے ،کہ خوف سے ہر چہرہ زرد ہے
وہ درد ہے کہ درد کو درد آشنا سنے

ہم قید و بند کی ہیں اذیت میں اے خدا
تیرے سوا نہ کوئی بھی دوجا دعا سنے

Comments are closed.