یہ دَرد جو دنیا پہ اُترا ہے

( اياز گُل )

نظم

هيءُ جو دردُ لَٿو دُنيا تي، سَهڻو آ
گهٻرائڻ، هارائڻُ پيارا ! مَهڻو آ

مَهلون مُڙسن تي اينديون هِن، مُنهن ڏبو
ربُ وڏو آ، مون کي تَنهن جو سُنهن ڏبو

يارَ ! وَبا جي موسمَ آهي ، ڌيانُ ڌَريو
گهرِ ويهو ۽ سڀني تي احسانُ ڪريو

صاف رکي هٿَ ، ڪورونا کان بَچڻو آ
کيس ڌِڪاري دروازي کان اچڻو آ

ٻيهرَ ڀاڪُرَ وِجهبا ، تاڙا ڀي لڳندا
رونقَ – ميلا سارا پاڙا ڀي لڳندا

جيونَ جا هي رنگَ اُڏامڻ ڪين ڏِجو
پنهنجي گهرَ جا ديپَ اُجهامڻ ڪين ڏِجو

ترجمہ : نظم
———————————
یہ دَرد جو دنیا پہ اُترا ہے
اسے سہنا پڑے گا
لیکن اس سے ڈرنا اور ہارنا
زندگی کے لئے ایک طعنے کی مانند ہوگا

مشکلات باہمت انسانوں کیلئے ہی ہوتی ہیں
میرا رب بہت بڑا ہے، اسی کے سہارے
تمام مشکلات کا سامنا کرنا ہے

دوستو ! یہ وبا کا موسم ہے
اس بات کو دھیان میں رکھنا ہے
گھر میں رہ کر، اپنے آپ اور سب اپنوں کو اس موتمار وبا سے بچانا ہے

“کورونا” سے ہاتھوں کو صاف رکھ کر ہی بچا جا سکتا ہے اور اس طرح اُسے
گھر کی دھلیز سے ہی دور بھگانا ہے

گلے لگنے اور کُھل کے ملنے کے دن
جلد لوٹ آئیں گے
اور گلی گلی رونق میلے لگیں گے

بس حسین زندگی کے یہ خوبصورت رنگ اڑنے نہیں دینے اور نہ ہی
اپنے گھر کہ روشن دینے بجھنےدینے ہیں.

Comments are closed.