اے خدا اتنی سزا بھی نہیں جچتی تجھ کو

(عزیزاللہ عابد)

قطعہ

اے خدا اتنی سزا بھی نہیں جچتی تجھ کو
تیرے مجرم کو ، خطا کار کو مشکل ھو گی
ٹال بھی دے مرے مولا یہ کرونا کا عذاب
تیری رحمت کے طلبگار کو مشکل ھو گی
(عزیزاللہ عابد )

———————————————————

غزل

گذری نہیں ھے شام مگر شام ھی تو ھے
پینا نہیں ھے جام مگر جام ھی تو ھے
بیٹھے رہو مکان کے اندر ہر ایک پل
مانا نہیں ھے کام مگر کام ھی تو ھے
تم جس جگہ بھی جاو کرونا ملے وہاں
بھرنا پڑے گا دام مگر دام ہی تو ھے
اقوامِ عالمین نے اوپر اٹھا کے ہاتھ !
رب کا لیا ھے نام مگر نام ھی تو ھے !
ملنا جو ھو تو راستہ کچھ تو نکال لو
گھر کا نہیں ھے بام ؟ مگر بام ھی تو ھے !
دل پر نہ لے ، کبھی تو ہنسی سے یہ لب ہِلا
کووِڈ وبا ھے عام مگر عام ھی تو ھے

Comments are closed.