کرلو گھروں میں قید خود کو ابھی بھی وقت ہے

(ارینہ وسیم)

کرلو گھروں میں قید خود کو ابھی بھی وقت ہے
دنیا پہ چھائی آزمائش بڑی سخت ہے

***********************************
استغفار کی گونجتی صدائیں بتا رہی ہیں
بند ہوں دروازے سبھی تو خدا یاد آتا ہے

***********************************
یارب ابر باراں میں ایسی شفا دے
مل جائے نجات اس موزی وبا سے

***********************************
بند ہیں کاروبار زندگی بچانے کی خاطر
غریب بھوکا سو گیا تو آخرت تباہ ہوگی

***********************************
مٹ جائے گی یہ آزمائش یوں نہ ڈر
تھام لے گا خدا تو کوشش تو کر

***********************************
وبا سے بچ جائے جان تو کیا
اٹھ چکا ہے جنازہ ضمیر کا

***********************************
نہیں فکر اپنی تو اوروں کی سوچ
ہر انساں یہاں اپنوں کی کائنات ہے

***********************************
ویراں ہیں مساجد خوف وبا سے
دکانوں کے گرد چھائی بھیڑ کمال ہے

Comments are closed.