گھرلوِٹ بھی آ

(عبداشکور آسی)

راستوں.کی نہیں.ہے تجھ کوخبر لوِ ٹ بھی آ.
رائیگاں جائے نہ یہ تیرا سفر لوٹ بھی آ

کن جواہر کی تگ و دو میں ہےمصروف سفر .
یاد کرتا ہے. تجھے اب ترا گھر لوٹب بھی آ .

آنے والا ہے بہاروں پہ نئے سر سے نکھار .
پھر گل استاں میں کھلیں گے گل تر لوٹ بھی .

کیوں سرابوں کی طرف بھاگ رہا ہے آسی.
دسترس میں ہیں تری شمس و قمر لوٹ بھی آ.

Comments are closed.