حالات حاضرہ

(عبداشکور آسی)

مرض تو ہوگیا رخصت کبھی کا .
مگر اب جان کے لالے پڑ ے ہیں .
چلا میلوں تھا آک روٹی کیخاطر .
سو اس کےپاؤں میں چھالےپڑےہیں.
کہاں ہیں بادشاہوں کے محافظ .
کہیں خنجر کہیں بھالے پڑے ہیں .
ہوا ہے حشر سب کا ایک جیسا .
یہیں گورے یہیں کالے پڑے ہیں .
سنبھالیں آسی کیسے لاڈلوں کو .
بڑی مشکل میں گھر والے پڑے ہیں. .

Comments are closed.