کس قدر بے بس ہوئی ہے آدمیت آج کل

(منشور مجتبیٰ حسنین)

کرونا وائرس
کس قدر بے بس ہوئی ہے آدمیت آج کل
ہر طرف چھائی کرونا کی ہے ہیبت آج کل
نا گہانی سی یہ آفت کس طرح کا ہے عذاب
ساری دنیا کی فضا کو کر دیا جس نے خراب
عقل انسانی سے بالاتر سمجھ سے ہے بعید
جس کے اثرات و نتائج حد سے بھی زیادہ شدید
اب سپر پاور کے بس میں بھی نہیں اس کا علاج
اب تو ہر پاور ہوئی سُپریم پاور کی محتاج
مشرق و مغرب بھی ڈوبے ہیں پریشانی میں آج
ساری دنیا مبتلا ہے ایک حیرانی میں آج
چاند تک جن کی رسائی وہ بھی گھبرانے لگے
لوگ اک دوجے کو ملنے سے بھی کترانے لگے
سارے انسانوں پہ کر دے رحم اے ربّٰ الرحیم
اس بلا کو ٹال دے اپنے کرم سے اے کریمّٰ
یہ دُعا منشورؔ کی کر لے میرے اللہ قبول
رحمتوں کا اپنی کر دے اپنے بندوں پر نزول

Comments are closed.