آنکھوں کے خواب قلب کے ارمان جل گئے

(جاویدؔ ڈینی ایل)

آنکھوں کے خواب قلب کے ارمان جل گئے
نفرت کی تیز آگ میں انسان جل گئے
جاویدؔ کس کو درد کا قصہ سنائیں ہم
عجز و خلوص و مہر کے امکان جل گئے
……………
اپنے گھروں میں خود کو ہی محصور کیجئے
ہاں دوسروں کو بھی ذرا مجبور کیجئے
جب تک کروناؔ مَر نہیں جاتا جہان سے
جاویدؔ ! احتیاط بھی بھر پور کیجئے
………..

Comments are closed.