وصل ہوتا تھا نعمتِ ارفع

(منظور ثاقب)
قطعات

وصل ہوتا تھا نعمتِ ارفع
ہجر رکھتا ہے برتری اب تو
وصل ہوتا تھا زندگی پہلے
ہجر ہوتا ہے زندگی اب تو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا عجب حالت ہوئی ہے حضرتِ انسان کی
رونقِ بازار چھوڑی وقفِ تنہائی ہوا
جو قصیدے پڑھ رہا تھا حریت کے کل تلک
آج وہ اپنی رضا سے آپ زندانی ہوا

Comments are closed.