آو اعمال ِ احتساب کرلیں

(زیب النساء زیبی)

سب جانتے ہر ذی نفس کو اک نہ اک دن۔۔۔۔۔
اس جہاں سے جانا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
مگر کرونا سے ڈرے سہمے سب سوچتے ہیں ۔۔۔۔۔
اگر ہم کرونا سے بچ گئے تو ۔۔۔۔۔
شاید پھر موت کبھی نہیں آے گی ۔۔۔ ۔۔۔۔
کچھ لوگ سمجھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کرونا ہمارے لیے نہیں ہے۔۔۔۔۔۔
ہم یوں ہی زندہ رہیں گے ۔۔۔۔۔
ہمارے کاروبار ِ زندگی یونہی رواں رہیں گے ۔۔۔۔۔۔
بس یہ ایک گیم ہے ۔۔۔۔۔
چند دن کا ہے۔۔۔۔۔ختم ہو جاے گا۔ ۔۔۔۔۔
اور کچھ سوچتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔جہاں اتنے کرونا سے جا ر ہے ہیں۔۔۔۔۔۔
تو ہم بھی جائیں گے ۔۔۔۔۔۔۔
عجب شش وپنج میں انساں ہے۔۔۔۔۔
ان حالات میں زندگی کا ہر پل ۔۔۔۔۔یقیں اور گماں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں مگر یاد رہے۔۔۔۔کرونا ختم ہو بھی جاے تو ۔۔۔۔۔۔
موت کا ذائقہ ہر ذی نفس کو چکھنا ہے ۔۔۔۔۔
اور اپنے اعمال کے سبب ہی عملِ احتساب سے گزرنا ہے۔ ۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔
آو ہم سب مل خود عمل ِ احتساب کر لیں۔۔۔۔۔۔یوں کرونا سے بچ جائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔اپنےاچھے کردار و عمل سے کرونا پہ فتح پائیں ۔۔۔۔۔۔۔

Comments are closed.