آج کل روئے زمین پر کسی وائرس کا راج ہے

(غلام شبیر باگڑی)

روئے زمیں تے اجکل وائرس کسے دا راج اے
کوئی روگ ھے کرونا جہڑا کہ لا علاج اے

بند ہن سکول کالج گرجے مسیتاں مندر
قید ہو کے رہ گئے ہن انسان گھر دے اندر
جیون دے دان کیتے زندگی دا احتجاج اے

ملاں تے پیر پنڈت پئے ہن بیمار تھیندے
ماہر طبیباں توڑی اس دا شکار تھیندے
سب زیر ہوکے رہ گئے جابر تے سامراج اے

بم تے بَرود اسلحے اس تو بچا نہی سگدے
دنیا دے زور آور وی طاقت وکھا نہی سگدے
قدرت دے سامنے کیا دنیا دے تخت تاج اے

دنیاں دے کونے کونے ہر سمت ھے بیاباں
لگدا ھے مک گئیاں ہن دنیاں توں رونقاں سب
احتیاط دے سوا نہی شبیر کوئی علاج اے

نظم کا
اردو ترجمہ
آج کل روئے زمین پر کسی وائرس کا راج ہے
یہ کرونا کا مرض ہے جو لاعلاج ہے
سکول ،کالج گرجے مسجدیں مندر بند ہیں
انسان گھروں کے اندر قید ہوکر رہ گئے ہیں
اب زندگی جینے کے لیے سراپا احتجاج ہے
مولوی اور پیر پنڈت بیمار ہوچکے ہیں
یہاں تک کہ ڈاکٹر بھی اس کا شکار ہوچکے ہیں
سب ظالم اور سامراج بھی اس سے شکست کھا گئے
بم اور اسلحہ اس سے بچا نہیں سکتا
دنیا کے طاقتور بھی اپنی طاقت دکھانے کے قابل نہیں
قدرت کے سامنے تخت وتاج کی کوئی اوقات نہیں
دنیا کا ہر کونا ویران ہو چکا ہے
ایسے لگتا ہے جیسے سب رونق ختم ہوچکی ہے
اب شبیر احتیاط کے سوا اس کا کوئی علاج نہیں

Comments are closed.