آؤ عہد کریں کہ ضابطہ رکھ لیں

(نبیلہ اشرف)

آؤ عہد کریں کہ ضابطہ رکھ لیں
دور رہ کہ اب رابطہ رکھ لیں
سماجی دوری کو پر اثر بنانے کو
ہاتھ دھونے کا ایک مقابلہ رکھ لیں
وقت کے گھاؤ بھرنے کی خاطر
کیوں نہ ہم کچھ فاصلہ رکھ لیں
جب نہیں ہو رہا کسی سے حل تو
خدا کے حضور یہ معاملہ رکھ لیں

Comments are closed.