سنو ! چھٹنے لگے بادل وبا کے

(عاصم بخاری)

سنو ! چھٹنے لگے بادل وبا کے
خبر اچھی کہیں سے آ رہی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لو ! جی چھوڑ دیا اب ہاتھ ملانا بھی
دل سے دل تو پہلے ہی کب ملتے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چند روز احتیاط گزر جائے جب وبا
گلے بھی ملیں گےاور ملائیں گے ہاتھ بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گلے ملنے پہ پابندی نہ کیوں ہو
دلوں میں ویسی چاہت بھی نہیں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فلک کے دامن سے اب بھی عاصم صدائے ہاتف یہ آرہی ہے
ذخیرہ اندوز کے تو دل میں کوئی بھی خوف خدا نہیں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا گر میں نے تم پر رحم بھی تو
کروں گا اک “محمدؐ” کی وجہ سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ندا ہاتف کی عاصم غیب سے یہ آ رہی ہے کہ
ابھی تک تو نہیں آئی سمجھ تجھکو مرے بندے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سنوں گا تمہاری کوئی اس کے بعد
کرو پہلے پورے حقوق العباد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Comments are closed.