ہم دیہاتی لوگ

(فضل معبود صائم)

ہم دیہاتی لوگ
کورونا او د کلي خلق
فضل معبود صائم
مونږ ه د کلى خلق
کورونا څۀ پېژنو
مونږ کليوال بانډېڅي
تل په بانډو کښې اوسو
ګډې بيزې څروو
يا غوا او خرۀ ساتو تل
سحر د کوره ووځو
خپلو پټو ته درومو
يا پړے تبر واخلو
خشاک له غرۀ پله ځو
مازيګر کور ته راشو
خېر که ذرې ذرې يو
يا دمه شوى يا نه
سرڅڼه اوکړو زر زر
ويښتو کښې تېل اولګو
پکښې ږمنز اووهو
بيا د سينې په جېب کښې
رومال په خوا کښې کېږدو
څونډے په ترڅ واړوو
خائستارې ډب ته راشو
خندا بړقا جوړه وي
ټول خپلې خپلې وايو
ماښام ډوډۍ له لاړ شو
ماسخوتن بيا راوځو
تر نيمې شپې ناست يو بيا
چرته حلوه پخ کړى
چرته لوبيا باندي وي
کله مېنچې پخ کړي
کله شين چائے باندې وي
څوک پټه ګوته کوي
او څوک لوډو کړنګوي
څوک غوا بيزې يادوي
څوک د پټو بحث کړي
اول رېډو به پروت وو
اوس ټى وي هم راغلے
لږه موده اوشوه چې
موبائيل هم راغلے
څوک پرې ګېمونه کوي
څوک پرې سندرې اوري
څو سکول والا هلکان
چې نوکران دي ښار کښې
چې کله کله راشي
د ښاړ خبرې کوي
کله خوشحاله کړي مونږ
ښې ښې خبرې کوي
کله مونږ اوويروي
د غم خبرې کوي
شاه ګل چې دا ځل راغے
څۀ ډېر خفه غوندې وو
ډېر پرېشانه وو نن
وې يو وباء رالوتې
ورته کورونا وائي
ډېر خطرناک وائرس دے
مونږ اول ځل واورېدو
چې وائرس لا څۀ وي
نن نور يو بحث نۀ وو
نۀ د چا ګډه مړه وه
نۀ د چا غوا وږې وه
نۀ خر بهر پاتې وو
نۀ بيزه سپو خوړلې
نۀ د پټو بحث وو
نۀ د وښو خبره
نۀ د لرګو چا څه وې
خو بس شاه ګل لګيا وو
ټول ورته غوږ غوږ ناست وو
شاه ګل قيصه کوله
مونږ يې خلې خلې ته کتل
چين کښې وائرس ښکاره شو
او بيا ترې ورو ورو خور شو
دا مصنوعي وائرس دے
خو يو نه بل ته لګي
او ښۀ ډېر زر زر لګي
ټوله دنيا کښې خلق
يو بل نه لرې تښتي
سم د قيامت حالات دي
خلق کور کـور کښې بند دي
څوک بهر نۀ را اوځي
جمات ته هم څوک نۀ ځي
نۀ څوک عمرې له تلے شي
او نۀ به حج له څوک ځي
ټول دکانونه بند دي
کاروبار ټپ ولاړ دے
سکولونه هم بند شوي
دفتري هم څۀ بند دي
ټول خلک کور کښې قېد دي
څوک چې د کور نه ووځي
او بېرته کور ته راشي
لاس په صابن وينځي بيا
څوک پخېرونه نۀ کړي
غاړې څوک نۀ ورکوي
يو بل نه لرې تښتي
د يو تپوس په ترڅ کښې
شاه ګل څۀ دا رنګ اووې
پوزه بهېږي اول
او ورله تبه راشي
وچ ټوخے ډېر ډېر کوي
سينه يې هم خوږېږي
يخني يې ډېره کېږي
سم نمونيا غوندې وي
په خوند او بوٸ باندې هم
دغه کس نه پوهېږي
اول يې کور کښې بېل کړي
څوک ورله خوا له نۀ ځي
وينه ترې ټسټ له يو سي
چې پته اولګېږي
چې بيماري شته ورته
نو سم د غم ماحول وي
بيا هسپتال ته يې کړي
ورله علاج شروع کړي
چي لا ډېر خراب شي
بيل يې مرکز ته بوځي
ونټى لېټر ورته وايي
دغه ډېر سخت حالت وي
خدائے دې ترې مونږ اوساتي
دنيا کښې سم ماتم دے
يو کس پښتنه اوکړه
د امريکې سره هم
ددې علاج نشته دے ؟
شاه ګل وې او کنه نو
يو ځائےکښې هم نشته دے
ټوله دنيا کښې دا وخت
زرګونه مړه شو ترينه
بيمار لکونو کښې دي
خيال د ځانونو ساتئ
نمونځونه کور کښې کوئ
بهر ته مۀ را اوځئ
نزدې نزدې مۀ کېښنئ
جوړ تازه هم مۀ کوئ
خلو ته کرې واچوئ
ورته ماسکونه وائي
لاس په صابن ډېر اوينځئ
خپل احتياط ډېر ډېر کوئ
ښۀ خوراکونه کوئ
چې مو وجود تکړه وي
دے به اثر کم کوي
کور کور کښې هم اووايئ
لوئې او واړه خبر کړئ
جومات کښې هم اووايئ
چې ګپ يې او نۀ ګڼئ
بيا به ستومانه يئ خو
خو کار به شوے وي بيا
لکه توکلې لاړې
چې بېرته نۀ راګرځي
بعضو خو او منله
خو بعضو ګپ اوګڼو
هله يې او منله
چې څيز راننوتو
اوس هر سړے دا وايي
چې دا حالت به نۀ وے
که د شاه ګل خبره
مونږ وې په وخت منلے

دیہاتی لوگ اور کورونا وائرس
ہم دیہاتی لوگ، کورونا کیا جانے ، ہم دیہات کے لوگ، ہمیشہ سے دیہات میں رہتے ہیں، اور بھیڑ بکریاں چراتے ہیں،
یا گائے اور گدھے پالتے ہیں۔ صبح سویرے گھر سے نکلتے ہیں، اور اپنے کھیتوں میں جاتے ہیں، یا رسی اور کلہاڑی لیکر،
لکڑی کاٹنے کے لئے پہاڑپر جاتے ہیں، سہ پہر کو واپس گھر لوٹتے ہیں، کیا ہوا اگر ہم بہت تھکے ہوئے بھی ہوں،
ابھی ہماری تھکاوٹ دور ہوئی ہو یا نہ، جلدی جلدی منہ ہاتھ دھو کر، بالوں میں تیل لگا کر، اور کنگھی کرکے،
پھر سینے کے اوپر والے جیب میں، وہی کنگھی رومال کے ساتھ جیب میں رکھ لیتے ہیں، بالوں کو ماتھے پر ایک طرف مڑواکر،
ایک مخصوص میدان (پہاڑ کے دامن میں) بیٹھ جاتے ہیں، ہنسی خوشی گپیں لگا کر، سب اپنے اپنے کارنامے بیا ن کرتے ہیں،
شام کے کھانے کے لئے اپنے اپنے گھر چلے جاتے ہیں، کھانے کے بعد پھر آنکلتے ہیں،
رات گئے تک پھر وہاں بیٹھ کر گپیوں میں مصروف ہوتے ہیں، کھبی حلوہ پکائی جاتی ہے، تو کھبی چھولے، اورکھبی کھبا رسویاں پکا تے ہیں۔
اور ساتھ ساتھ قہوے کا دور چلتا رہتاہے، چند دوست آپس میں چپی ہوئی انگوٹھی کا کھیل کھیلتے ہیں۔ کچھ لڈو کھیلتے ہیں،
بعض اپنی گائے اور بکریوں کا ذکر کرتے ہیں۔ کوئی اپنے کھیتوں کی بحث چھیڑتے ہیں، پہلے پہل ہمارے ہاں صرف ریڈیو ہوا کرتا تھا،
اب ٹیلی وژن بھی آگیا ہے، کچھ عرصہ ہوگیا ہے کہ، موبائل فون بھی آگیا ہے، جس پر بعض لوگ کھیلتے ہیں، بعض اس پر گانے بھی سنتے ہیں، کئی تعلیم یافتہ لڑکے، جو شہر میں ملازمت کرتے ہیں، جب وہ چھٹی پر گاؤں آجاتے ہیں، وہ شہر کی باتیں کرتے رہتے ہیں،
کھبی وہ دل خوش کن باتیں کرتے ہیں، لیکن کھبی کھبار منحوس اور بُری خبر یں سناتے ہیں، شاہ گل جب اس بار چھٹی پر گاؤں آیا،
کچھ زیادہ ہی پریشان پریشان سا لگتا تھا، آج واقعی بہت خفہ تھا، کہتے تھے کہ ایک وباء پھیلی ہوئی ہے، جسے کورونا کہا جاتا ہے،
انتہائی خطر ناک وائر س ہے، ہم نے پہلی بار یہ نام سنا، کہ وائرس کیا ہوتا ہے، آج کورونا کے علاوہ کوئی دوسری بحث نہیں تھی،
آج نہ کسی کی بھڑی مری ہوئی تھی، نہ کسی کی گائے بھوکی تھی، اور نہ ہی کسی کا گدھا گھر سے باہر رہ گیا تھا،
نہ کسی کی بکری آوارہ کتوں کی بھینٹ چڑھ گئی تھی، نہ کھیتوں کی باتیں ہوری تھی، نہ جانوروں کے چارے کی، اور نہ کوئی لکڑیوں کی بات کرتا تھا، بس شاہ گل ہی بولتا رہتا تھا، سب غور سے ان کی باتیں سن رہے تھے، شاہ گل کورونا وائرس کی بات کرتا تھا، اور ہم سب اس کا منہ تھکتے رہتے تھے ،
کہنے لگے چین میں ایک وائرس ظاہر ہوا، اور آہستہ آہستہ پھیلتا گیا، یہ انسان کا بنایا ہوا (مصنوعی) وائرس ہے،
جو ایک سے دوسرے کو لگتا اور پھیلتا ہے، اور انتہائی تیزی سے پھیلتا جاتا ہے، پوری دنیا میں لوگ، اب ایک دوسرے سے دور بھاگتے ہیں،
ساری دنیا میں قیامت صغریٰ برپا ہوگئی ہے، سب لوگ گھروں میں مقید ہیں، کوئی بھی گھر سے باہر نہیں نکلتا، مساجد میں بھی لوگ نہیں جایا کرتے،
نہ عمرے پر کوئی جاسکتا ہے، اور نہ ہی اس سال حج پر کوئی جائے گا، ساری دکانیں بند پڑی ہوئی ہیں، کاروبار ٹھپ ہوکر رہ گیا ہے،
سکول اور دیگر تعلیمی ادارے بند ہیں ، دفاتر بھی بند ہیں، سب لوگ اپنے اپنے گھروں میں بند اور مقید ہیں،
جو لوگ گھر سے کسی خاص ضرورت کے لئے باہر نکل جاتے ہیں۔ اور واپس گھر آجاتے ہیں،
تو ہاتھ صاف پانی اور صابن سے(بیس سیکنڈ تک) دھوتے ہیں،
اب نہ کوئی مصافحہ کرتے ہیں، اور نہ ہی معانقہ، لوگ ایک دوسرے سے دور بھاگتے ہیں، ایک سوال کے جواب میں، شاہ گل نے کچھ یوں کہا،
کہ پہلے متاثرہ انسان کو نزلہ ہوجاتا ہے، اور بخار بھی آتا ہے، خشک زکام بھی ہوتا ہے، سینے میں درد اور جلن محسوس ہوتا ہے، اسے ٹھنڈ بھی لگتا ہے، گویا کہ اسے نمونیا ہوگیا ہے، وہی متاثرہ انسان بو اور ذائقہ کی لذت سے محروم ہوجاتا ہے، وہ بو محسوس کرسکتا ہے اور نہ ہی ذائقہ، پہلے اس متاثرہ شخص کو گھر میں کورنٹین کیا جاتا ہے، اس کے قریب کوئی نہیں جاتا، پہلے اس کا سیمپل لیا جاتا ہے، جب پتہ چلے کہ اسے وائرس لگ گیا ہے، تو ان کے ہاں غم کا سماں ہوتا ہے،
پھر اسے ہسپتال لے جاکر (آئسولیٹ کیا جاتا ہے)، اس کا علاج شروع کیا جاتا ہے، جوشخص زیادہ خراب ہوجاتا ہے،
تو پھر اسے بڑے ہسپتال (مرکز) لے جایا جاتا ہے، جسے ونٹی لیٹر کہا جاتا ہے، یہ حالت بڑی شدید ہوتی ہے،
اللہ تعالیٰ ہم سب کو اس حالت سے بچائیں۔ دنیا میں ایک ماتم برپا ہوگیا ہے، ایک اور شخص نے(شاہ گل)سے پوچھا، کیا امریکہ کے پاس بھی؟ اس کا علاج اور بچاؤ نہیں ہے؟، شاہ گل نے کہا، جی ہاں بلکل، کہیں بھی اس کا علاج نہیں ہے، اس وقت پوری دنیا میں، ہزاروں متاثرہ افراد مر چکے ہیں، لاکھوں کی تعداد میں مریض ہیں، اپنا خیال رکھئے، نماز گھر پر پڑھئے، باہر مت نکلو، ایک دوسرے کے نزدیک مت بیٹھا کرو، ایک دوسرے سے مصافحہ نہ کرو ، ماسک پہنا کرو، ہاتھ صابن سے دھویا کرو، زیادہ سے زیادہ احتیاط کریں، متوازن اور اچھی خوراک کریں۔
جب قوت مدافعت بہتر ہوں، تو وائرس بہت کم اثر کرے گا، جاکر اپنے اپنے گھروں میں بھی کہہ دو، چھوٹے بڑے سب کو بتاؤ،
اپنے اپنے مساجد میں بھی کہو، کہ یہ مذاق مت سمجھو، ورنہ پھر پچھتاؤگے، لیکن کام ہوچکا ہوگا، پھر کچھ ہاتھ نہیں آئے گا، جس طرح تھوک واپس نہیں آتا، بعض نے تو بات مان لی، لیکن بعض نے مذاق اور گپ سمجھ لیا۔ تب مان گئے، جب وائرس دہلیز پر آپہنچا، اب ہر کوئی یہی کہتا ہے، کہ یہ حالت نہ ہوتی، اگر شاہ گل کی بات، ہم بر وقت مان لیتے،

Comments are closed.