وبا کے دنوں میں شاعری کا عالمی دن

(اسامہ امیر)

آج کے دن

مجھے بوسے کے اہمیت کا اندازہ ہوا

جہاں

میری صبح اپنا رجز پڑھنا بھول گئی

شام اپنی بے رونقی پر ماتم کرنے کے لئے

ہاتھ تلاش کر رہی ہے

رات نے اپنے تمام گیت نوحے میں تبدیل کر لئے

وہاں

میرا آج کا دن

میری شاعری

میرا بوسہ

اس عورت کے نام

جس نے رضاکارانہ طور پر

موت کو قریب سے دیکھا

اس قوم کے نام

جس نے ہمارے اندر

جینے کی امید جگائی

اس اٹلی کی بالکونی

کے نام

جہاں ابھی بھی گٹار کی دھن پر

زندگی شاداب ہے

Comments are closed.