وقت نے ہر دروازے پر دستک دی ہے

(ابرار خٹک)

‘‘په کور میشته شۍ‘‘ (گھر میں رہیے)(Stay at Home)

په کور میشته شۍ وخت اواز په هر درشل کړې دے
چه کرونا مو په وطن باند ی یرغل کړې دے

د کرونا سپیرې سیلۍ چہ په وطن رالوتي
ګړده نړۍ په تناره ده وخت په اور ولاړ دے
لامو خندلي قدر نه وو،اوس وبا مووژني
ژوند د مرګي نه په لړزان دے پہ سلګو ولاړ دے
د مرګي وانړي بادوی وبا غوبل کړې دے
چه کرونا مو په وطن باند ی یرغل کړې دے
دا خپل هیواد، دا خپل بچي دَ، دِ افته بچ ګړﺉ
زاړه ځوانان او میندې لونړه مصیبته بچ ګړﺉ
د خوشحالو نه ډکې جالی د هیبته بچ کړﺉ
دغه ناچاره وطن هم د نور غربته بچ کړﺉ
په کلی راشی، کور د بچ کړه، چا متل کړې دے
چه کرونا مو په وطن باند ی یرغل کړې دے
هغه چه سر ئی په تلی کښ دے او تا رغوي
ځۍ چه د هغه مسیحا د سترګو تور جوړ شو
آچه لاشونه ې راوړی، بچی ې سر ته ژاړي
ځۍ چه د هغه یو شهید د زړه ټکور جوړ شو
څالی د مینی ورانوي دا ی، چل ول کړې دے
چه کرونا مو په وطن باند ی یرغل کړې دے
دا جل وهلې، باغ د سوي پرهرونو وطن
نورو لاشونو اوچتولو، پامته داره نه دے
کہ مو شہید د ہسپتال دے یا سنگر د غاړې
زخمی هیواد مو نور غمونو ته تیاره نه دے
سترګې اوباسي وار ې داسي په څنګل کړې دے
چه کرونا مو په وطن باند ی یرغل کړې دے
دغه کوډلې، مونږ نه بیرته خنداګانې غواړي
راځۍ چه یو شو او د مینی دنیا بیا جوړه کړو
دا جل وهلې باغ راشین کړو د یو والي سره
په د وطن باند د امن ښکلا بیا جوړه کړو
توراوسپین نشته وار ې ښار او په ځنګل کړې دے
چه کرونا مو په وطن باند ی یرغل کړې دے
د روغنتون مسیحایان او هر وګړې د فوځ
دقوم ویاړ دې او عظمت ته ې سلام کوي
هر یو نوکر که رضا کار دے د اولس او پولس
د وطن ننګ دے او ہمت تہ ې سلام کوي
ابراره هر انسان حیران دے چا څه چل کړې دے
چه کرونا مو په وطن باند ی یرغل کړې دے

(ترجمہ )
’’وقت نے ہر دروازے پر دستک دی ہے ، گھر وں میں رہیے!!،کیونکہ کرونا نے ہمارے وطن پر حملہ کرلیا ہے۔‘‘
’’کرونا کی منحوس ہوائیں ہمارے وطن کا رخ کرچکی ہیں ۔ساری دنیا جیسے تندور کی آگ پر جل رہی ہو۔ ہم نے تھوڑی دیر کے لیے بھی امن و سکون کی سانس نہ لی تھی کہ کرونا کی وبا جانیں لینے پہنچ گئی ہے۔زندگی پر موت کا لرزہ ہے اورآخری ہچکیاں لے رہی ہے۔وبا موت کی کھلیان گاہ رہی ہے، کیونکہ کرونا نے ہمارے وطن پر حملہ کرلیا ہے۔‘‘
’’اپنے غریب وطن،اولاد،بوڑھوں، جوانوں،ماؤں، بیٹیوں اور خوشیوں بھرے آشیانوں( گھروں) کواس وبا سے بچائیں۔ضرب المثل ہے کہ جب گاؤں پرآفت آئے ،تو گھر بچانے کی فکر کرو‘‘
’’وہ جس نے سر ہتھیلی میں رکھا ہے اور تیری جان بچا نے کی کوشش کر رہا ہے،آئیں اس مسیحا کی آنکھوں کی ٹھنڈک بن جائیں۔وہ جن کی لاشیں گھرلائی جاتی ہیں،اور ان کے بچے ان پر ماتم کرتے ہیں،آئیں ان شہیدوں کے دلوں کے زخموں کا مرہم (سکون کا باعث)بن جائیں۔ یہ وبا بڑی فنکاری اور چالاکی سے محبتوں کے آشیانے برباد کرنے پر تلی ہوئی ہے۔‘‘
’’ جلے ہوئے زخموں کا اجڑا چمن،وطن عزیز پاکستان مزید لاشیں اٹھانے کی تاب نہیں لاسکتا۔شہید ہسپتال کا ہو یا محاذ جنگ کا ، زخمی وطن مزید غم او ردکھ اٹھانے کا متحمل نہیں ہوسکتااوریہ وبا ایسے غضب کی کہنی مارتی ہے کہ ساتھ آنکھیں نکل آتی ہیں۔ اس لیے گھروں تک محدود رہیے کیونکہ کرونا نے ہمارے وطن پر حملہ کرلیا ہے۔‘‘
’’یہ جھونپڑیاں(گھر)ہم سے خوشیاں مانگتی ہیں۔آئیں ہم ایک ہوجائیں اور محبت کی دنیا آباد کریں۔اس اجڑے چمن (پاکستان)کو اتفاق و اتحاد سے آباد کریں اور یہاں امن کی خوبصورتی لائیں۔کرونا کی وبا کالے اور گورے کا فرق نہیں کرتی ، ا س نے شہر اور جنگل ہر جگہ پہ وار کیا ہے۔ اس لیے گھروں تک محدود رہیے کیونکہ کرونا نے ہمارے وطن پر حملہ کرلیا ہے۔‘‘
’’ہسپتالوں کے مسیحا ہوں کہ فوج کا ہر جوان،قوم کو ان پر فخر ہے اور ان کی عظمت کو سلام پیش کرتی ہے۔عوامی خدمت گار(سول سرونٹ) ہو،رضا کار یا پولیس والا؛ان سب پر وطن کوننگ اور غیرت ہے اور قوم ان کی ہمت کو بھی سلام پیش کرتی ہے۔ابرار ؔ، ہر انسان حیران ہے کہ یہ کسی نے کیا کرلیا ہے؟ اس لیے گھروں تک محدود رہیے کیونکہ کرونا نے ہمارے وطن پر حملہ کرلیا ہے۔‘‘

Comments are closed.