تم کہو تو صحرا کو گلستاں کردوں

(شہنیلا)

تم کہو تو صحرا کو گلستاں کردوں
جو چاہو تو زمیں کو آسماں کردوں،
نور کی بارش ہو جاۓآنگن میں
چلو تو راستے کو کہکشاں کردوں،
زمیں کے چہرے سے مٹادوں دردسارے
اس جہاں میں جنت کاسماں کردوں،
فصل گل ہی ہو ہمیشہ احبابٍ چمن میں
خزاں کو سدا بے نام و نشاں کردوں،
ماوراۓ فطرت ہیں یہ ساری باتیں
کاش کہ اپنے درد کا ہی درماں کردوں٠

Comments are closed.