کہتے ہیں دل سے خیر کے لشکر،،،، تجھے سلام

(شہاب صفدر)

کہتے ہیں دل سے خیر کے لشکر،،،، تجھے سلام
اے اگلے مورچے کے دلاور،،، ،،،،،،،،،تجھے سلام

رزم ِ بقا میں ہم بھی ہیں صف بستہ دل بہ کف
تو کر گیا ہے مرحلہ یہ سر،،، ،،،،،، تجھے سلام

دنیا دکھوں کا گھر ہے بجا لیکن اس میں کچھ
ہیں چارہ ساز تجھ سے بھی دلبر،،،، تجھے سلام

بیٹھا ہوں جا نماز پہ اور ہاتھ. ہیں بلند
فرزند ِ قوم…، .. فخر ِ برادر،، ،،،،، تجھے.سلا م

مایوسیوں کی پھیلی ہوئی دھند میں ابھی
کہتے ہیں تارے،،، مطلع ِخاور،،، ،،،،تجھے سلام

میں تجھ کو جانتا نہیں پر تیرا عزم و شوق
ہے مقتضی کہوں،،،، پسر ِ نر ،،، ، تجھے سلام

اقبال کی نگاہ ِ محبت میں تھا. شہاب
یہ در کہیں. جسے مہ و اختر،،،، ،،، تجھے سلام

Comments are closed.