خدارا گھروں میں رہیں

(زیب النساء زیبی)
” خدارا گھروں میں رہیں،” ڈاکٹرز کی اپنی عوام سے اپیل”۔۔۔۔۔خدارا ہماری مدد کیجیے”

ہم ڈاکٹرز ہیں ۔۔۔اپنی ڈیوٹی کر رہیے ہیں ۔۔۔۔
ہمیں اپنی جانوں کی پرواہ نہیں۔۔۔۔۔۔
مگر ہم اپنے گھروالوں کو کیسے بچائیں ۔۔۔۔
ہمارے بھی ماں باپ ، بزرگ بچے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم متاثر ہوں گے ۔۔۔۔۔
تو ان سب کو کریں گے ۔۔۔۔
اسپتال میں بھی ایک ڈاکڑ متاثر ہو۔۔۔۔۔
تو اُس کے ساتھ کا پورا ٰعملہ۔۔۔۔۔۔۔۔
,سوئپر, نرس, وارڈ بواے، آیا، مشین آپریٹر ، لیب اسٹاف، اور کئی ڈاکڑ
قر نطینہ میں جاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
ہمارے 246 ڈاکٹرز کرونا میں مبتلا ہیں ۔۔۔۔
2 ڈاکڑز مر چکے ہیں۔۔۔.
مگر پھر بھی ہم اگلی صفوں پہ ڈٹے ہوے ہیں۔۔۔۔۔۔
ہمارے حوصلے مضبوط ہیں۔۔۔۔۔۔
سوچیے ! ڈاکڑز مرنا شروع ہو گئٙے تو ۔۔۔۔۔
مریض کون دیکھے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دل کے، گردوں، سانس،خون کے،۔۔۔۔۔ ہڈیوں، گائنی، اور ایمرجنسی مریض۔۔۔۔۔
یہ سب کہاں جا ئیں گے۔۔۔۔۔۔۔
ہمارے پاس ٹسٹنیگ کٹ ، اور اتنے حفاظتی لباس خریدنے کی سکت نہیں ۔۔۔۔۔۔۔
ہمیں صرف آپ کی مدد درکار ہے ۔۔۔۔۔۔
عوام ہمارا ساتھ دیں ۔۔۔۔
کہیں اجتماع نہ کریں ۔۔۔۔۔
آپ نے زا ئرین تبلیخی جماعت کے لوگ دیکھے ۔۔۔۔
اب ترویح نماز رمضان ہے۔۔۔۔۔۔۔
ہمارے اسپتال ،80 فیصد بھر چکے ہیں۔۔۔۔۔۔
اوجھا ،سول ،جناح، ایکسپو۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگے پیک ہے۔۔۔۔ایمرجنسی ہو گئی تو مشکل ہو جاے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ترجیحی بنیادوں پہ مریض بچانے ہوں گے۔۔۔۔۔۔۔
بزرگ اور ساٹھ سے اوپر والے نہیں بچ سکیں گے ۔۔۔۔۔۔
ہمارے سامنے جب جوان مرتا ہے۔۔۔۔۔
تو برداشت نہیں ہوتا ۔۔۔۔۔۔۔
زچہ اور بچہ متاثر ہو جاے تو امید ٹوٹ جاتی ہے ۔۔۔۔۔۔خون کی الٹیاں کرتے مریض ۔۔۔۔۔زندگی اور موت کی کشمکش ۔۔۔۔۔۔۔
کئی سو لوگ کرونا سے لقمہ ِاجل بن چکے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کا بس ایک ہی علاج ہے۔۔۔۔۔
گھروں میں رہیں۔۔۔۔ بچوں جوانوں کو سمجھائیں ۔۔۔۔۔۔
پریز ،اور احتیاط، علاج سے بہتر ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رزق اللہ نے دینے کا وعدہ کیا ہے۔۔۔۔۔۔
وہ بھوکا نہیں سلاتا۔۔۔۔۔۔
صحت اور جان نہیں ہوگی ۔۔۔۔۔
تو پیسہ کاروبار کیا کریں گے۔۔۔۔۔۔۔
ُپہلے جان کی حفاظت کریں ۔۔۔۔۔۔۔
جان ہوگی تو ساری زندگی کماتے رہیں گے۔۔۔ ۔۔۔۔۔
عبادات گھر میں کر لیں۔۔۔۔۔۔۔
خدارہ ہمارا ساتھ دیجیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صرف آپ کی مدد سے ہم ۔۔۔۔۔
اس مرض سے اپنے ملک کی جان چھڑا لیں گے۔۔۔۔۔
خدارا ! اپنے آپ پہ، اپنے خاندان پہ، اپنے ملک پہ رحم کیجے۔۔۔۔۔۔۔۔ خدارا ہماری مدد کجیے۔۔خدارا گھروں رہیں۔۔۔۔۔۔۔۔.

Comments are closed.