طاقت کا نشہ اور کرونا

(زیب النساء زیبی)

اس انساں کوبہت زعم تھا۔۔۔۔۔۔۔
اپنی ذہانت اپنی ترقی پر۔۔۔۔۔۔
اپنی طاقت تلے روند ڈالا انسانیت کو ۔۔۔۔۔۔
اس زمیں پہ طاقت و حکومت ۔۔۔۔۔۔اور معشیت کا نشہ اس قدر بڑھا کہ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہر طرف کمزوروں کو کچلنے کے
منصو بے بنے۔۔۔۔۔
کیا کشمیر ، فلسطین و برما، ۔۔۔۔۔۔۔شام و عراق،۔۔۔۔۔۔بوسینا , فلپا ئین، ۔۔۔انڈونیشیا بھارت، ۔۔۔
اور کیا افغا نستان و پاکستان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسلام کو کئی حصوں میں بانٹ کے ۔۔۔۔. ۔۔۔۔
غداران ِاسلام پیدا کئیے گئیے۔۔۔۔۔۔
مسلمانوں پہ دہشت گردی کے لیبل لگے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کمزور ملکوں کی آزادی سلب کرنے کے خواب دیکھے گئیے۔۔۔۔۔۔۔.
کسی کو معیشت کی مار ماری گئی۔۔۔۔۔۔
کسی کو قر ضوں میں جکڑا گیا۔۔۔۔۔۔کہیں کرفیو لگا لاک ڈاون ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ِیوں ظالم نےمظلوم کو اپنا دست ِ نگر کر لیا۔۔۔۔۔۔۔۔
مذہب و تعصب کے نام پہ نفرت اتنی بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہ شرم سے انسانیت کے سر جھک گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تسخیر ِ کا ئنات کے زعم میں۔۔۔۔۔۔۔
یہ انساں انسانیت سے گر گیا ۔۔۔۔۔
چاند ،مریخ ،
کہکشاں ،خلا ،زمین و فضا،۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنی ترقی کے سفرپہ رواں قومیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خودکو کا ئنات کامالک ِ کُل سمجھنے لگیں۔۔۔۔۔۔۔
سپر طاقتیں اور ان کے فرعون صفت حکمراں ۔۔۔۔۔۔۔۔
خدا کے وجود سے منکر ہوے ۔۔۔۔۔۔۔۔
اور خود کو خدا سمجھنے لگے۔۔۔۔۔۔
زمیں پہ جھوٹ و حرام ، بد دیانتی،
بے حیا ئ بڑھنے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پھر مالک ِ کا ئنات نے اپنا جلوہ دکھایا ۔۔۔۔۔۔۔
سب بے بسی سے تڑپ اٹھے۔۔۔۔۔۔۔
سب طاقت کے بت گر گئے ۔۔۔۔۔
زمیں پہ ہر طرف کرونا چھا گیا
اک ان دیکھا وائرس اللہ کی طاقت و وحدانیت کو سمجھا گیا

Comments are closed.