تیرے اشارے سے رُک گئی ھیں زمیں کی ساری ہی رونقیں اب

(ڈاکٹر شاھدہ سردار)

” لُا اِِلَہَ اِلاَ اَنتَ سُبَحانَک ”

تیرے اشارے سے رُک گئی ھیں زمیں کی ساری ہی رونقیں اب…..
تُو اَلولُی تُو اَلَعلیُ تُو الَجبَارُ تُو اَلقھَارُ عزیز تُو ھے حفیظ تو ھے…
اے خالق کَل یہ زندگی آب اسیر ھو کر تڑپ رہی ھے..

حَبیب تُو ھے بَصیر تُو ھےتُو مَالِک مُلک وَلی بھی تُو ھے..

رَؤف تُو ھے رَفیعِ بھی تُو ھے رَفیِق تُو اور رَشیِد بھی تُو..

عذاب ھم پر جو ھے مُھمیِن سلط ھمارے اعمال کی سزا ھے..

تُو جانتا ھے خَبیِر تُو ھے وَکیِلِ تُو اور قَوِی بھی تُو ھے..

محبتیں نہ صداقتیں تھیں اطاعتیں نہ عبادتیں تھیں..

اخُوتیں نہ عنایتیں تھیں لطافتیں نہ شرافتیں تھیں..

نمائشیں تھیں کدُورتیں تھیں نہ رفعتیں تھیں نہ عظمتیں تھیں..

منافقت سے بھرا لبالب تھا ظلمتوں کا یہ دُور ایسا…

کہ خود نمائی تھی خود گمانی ہر اک بشر کے سروں پہ رقصاں…
محبتوں کا اثر کہاں تھا کہ بندہ بندے سے بد گماں تھا..

ہر ایک اپنی سنا رہا تھا ھوا تھی فرقہ پرستیوں کی…

ھمارے احساس کھو گئے تھےضمیر سب کے ہی سو گئے تھے…

اے مہرباں تُو جلال بھی ھے کمال بھی بے مثال بھی ھے الَتواَب تُو لاَجواب بھی ھے..

خُدا کے احکام سب بُھلا کر گریز
کرتے ھوے بَشر کو خُدا نے ایسا سبق سکھایا..

دھری رہیں ساری راحتیں پھر عنایتیں ساری چاہتیں پھر…

مگر ھمیں اے خُدائے برتر اُمید رحمت بھی ھے تُجھی سے عطا رحمت بھی ھے تُجھی سے…

رَحَیِم تُو ھے کَریِم تُو ھے حَکیِم تُو ھے حَلیِم تُو ھے قُدوس بھی تُو سلَام بھی تُو..

مجھے یقیں ھے میں جانتی ھوں تُجھے محبت ھے ہر بَشر سے..
چلے گا پھر سے نظامِ ہستی تیری عنایت کی اک نظر سے..

سزا میں جکڑے ہوئے بَشر کی قبول ھو گی کبھی تو معافی….

تُو مہرباں ھے تُو جاوداں ھے محبتوں کا ھے تُو اک جہاں ھے…
غفار تُو ھے غَفُور تُو ھے وہاب تُو ھے شَکُور تُو ھے صَبُور تُو اور نُور بھی تُو..
مُجیِب ھے تُو حَبیِب بھی تُو! تُو ھاَدِیِ الَبدیعِ و الباقیِ..

ھماری سانسیں تمھارے دم سے کہ قَادِر ُالُمُقتَدر بھی تُو ھے..
لُطیفِ بھی تُو مُھمیِن بھی تُو ھے رَحمتُ اللعالمین بھی
تُو اَلرَحَمُرُاَحیِمں بھی.

Comments are closed.