کورونا کی صورت میں باہر موت کھڑی ہے

(فریدہ خانم)

غزل

ویکھو باہر موت کھڑی اے ، گھر وچ بیٹھو
لائی کورونے خوب تڑی اے، گھر وچ بیٹھو
روح سنوارو، من چمکائو ، جان بچائو
دسدی ویلے ہتھ چھٹری اے، گھر وچ بیٹھو
انج تے اکو تھاہ تے رہنا ، نال نہیں بہنا
ویکھو ایہ ازمیش کٹری اے، گھر وچ بیٹھو
اپنے تن دی ، اپنے من دی کرو صفائی
عملاںوالی سخت گھڑی اے، گھر وچ بیٹھو
فوج، حکومت ، ڈاکٹر جو کجھ کینہدے منو
کاہدی موت دے نال اڑی اے ؟ گھر وچ بیٹھو
بھلیو!جیندے رہے تاں سارے کم ہو جاسن
سچی گل ایہ رڑھے چڑھی اے، گھر وچ بیٹھو
منیے پاک قرآن تے آقاﷺ دا فرمان
توبہ والی آئی گھڑی اے، گھر وچ بیٹھو
کینہدی خانم منگئیے معافی سوہنے رب تو ں
اوہدی رحمت لائی جھڑی اے، گھر وچ بیٹھو

مفہوم : کورونا کی صورت میں باہر موت کھڑی ہے اس لیے آپ گھر کے اندر رہیں۔وقت ایسا آ گیا ہے کہ ٓاپکو اپنی روح اور دل کو صاف رکھنا ہے۔ اسی طرح ہی آپ کی جان بچ سکتی ہے۔ایسا کڑا وقت آیا ہے کہ آپ کو ایک گھر میں رہتے ہوے بھی ایک دوسرے سے فاصلہ رکھنا ہے۔ اندر کے ساتھ باہر کی بھی صفائی کا خیال رکھیں۔ بار بار ہاتھ دھونے کا عمل دھراتے رھیں۔آپکی جان کی حفاظت کرنے کے لیے حکومت فوج ، اور ڈاکٹر جو ہدایات دے رہے ہیںان پر عمل کریں اس کی خلاف ورزی نہ کریںاور گھر میں بیٹھ جائیں۔دوستو صاف بات یہ ہے کہ اگر آپ زندہ رہیںگے تو سارے کام ہو جائیں گے۔قرآن پاک اور حضور پاکﷺ کے احکام پر عمل کریں۔یہ توبہ والا وقت ہے۔ خانم کہتی ہے کہ اپنے رب سے معافی مانگ لینی چاہیے کہ اس کی رحمت نے ہمیں موقع دیا ہے کہ ہم اپنے رب کی رحمت سے بچ سکتے ہیں بس آپ گھر میں بیٹھیں۔

Comments are closed.