موت برحق ہے

(زیب النساء زیبی)

اے مالک ! ہاں بے شک موت برحق ہے ۔۔۔۔
ہم جانتے ہیں ۔۔۔۔ہمارا مرنا جینا ترے حکم سے ہے۔۔۔۔۔
مگر اے مالک !
ہم کو موت کی ایسی عذاب ناک سختی سے بچا دے۔۔۔۔۔۔
اپنے عزیزوں ،رفیقوں،سے دور ، لا وارث موت۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ نماز ِ جنازہ، نہ مرتے وقت اپنوں کا دلاسہ ، ۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ کانوں میں اپنوں سے بچھڑنے کے دکھ بھرے نوحے۔۔۔۔۔۔
بس خاموشی سے تڑپتے سسکتے۔۔۔۔۔۔انجان بستر پہ دم توڑ دینا۔۔۔۔۔۔۔
ایے مالک عذاب ِ کرونا ہٹا دے ۔۔۔۔۔۔
ایسی موت سے بچا لے ۔۔۔۔۔
ہمیں ایسی بے حرمتی کی موت نہیں چاہیے ۔۔۔.۔۔۔
ہاں موت سے ہم گبھراتے نہیں ۔۔۔۔۔
پر ہمیں موت وہ چاہیے ۔۔۔۔۔
جو پُر تقدس ہو ،۔۔۔۔
اپنے پیاروں کے پاس ہو ۔۔۔۔۔
وہی موت جو چاہتوں ، رفاقتوں ، محبتوں ، عنایتوں کے درمیاں ہو ۔۔۔۔۔
قراں کے ساے تلے ، دعاوں , سورتوں آیتوں ، کے ساتھ ۔۔۔۔
جس کی رخصتی ہو۔۔۔۔
سفر ِ آخرت پہ پھولوں ،گلابوں ، کے جس پہ عطر ہوں۔۔۔۔۔۔
تیری محبت کی نظر ہو جس پہ۔۔۔۔۔۔
تو ہم سے راضی بہ رضا ہو ۔۔۔۔۔
اور جب ترے پاس آئیں تو لحد بھی پکارے۔۔۔۔۔
اے نبی دیکھ ترا امتی آگیا ۔۔۔۔
اُس جہاں سے اِس جہاں سر خرو آگیا

Comments are closed.