میں کرونا ہوں۔۔۔میرا کوئ مذہب نہیں

(زیب النساء زیبی)

چچا خالو اور نانا غصے میں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔دادا بھی منہ بسورے پڑے ہوے ہیں ۔۔.۔۔۔۔۔
تراو یح سنت ِ موکدہ ہے ۔۔۔۔۔
تو کیا مسجد نہ جا ئیں۔۔۔۔۔
سارے بازار کھلتے ہیں۔۔۔۔۔
کاروبار کھل رہے ہیں۔۔۔۔
تو پھر نماز اور تراویح مسجد میں کیوں نہیں ہوگی۔۔۔۔۔۔
ہم مریں یا جئیں مسجد جا ئیں گے۔۔۔۔
موت جب آنی ہے وہ آے گی۔۔۔۔۔
بس ہم تو جا ئیں گے۔۔۔۔
بہو, بیٹی , بیٹے نے پاپا کو دیکھا۔۔۔۔۔
ایک دوسرے سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
ّوّہ بزرگ ہیں وہ جا نتے ہیں ۔۔۔
اُن کی طبعی عمر پوری ہونے کو ہے ۔۔۔۔۔
وہ آخری عمر میں مساجد بند ہوتے نہیں دیکھ سکتے۔.۔ ۔۔ ۔۔۔۔
دادا نانا سب گھر کے بڑے ۔۔۔۔
دستانے پہنے ماسک لگاے مسجد جا پہنچتے۔۔۔۔۔۔۔
وہاں سے لوٹتے تو چہرے پُر سکون ہوتے۔۔۔۔۔۔
مگر گھر کی خواتین سہمی ہو ئ تھیں۔۔
گھر میں چار بچے تھے۔۔۔۔
وہ دادا, خالو, نانو سے دورنہیں رہ سکتے ۔۔۔۔
وہ لپکتے ہیں ,گود چڑھتےہیں ۔۔۔۔۔۔۔
ارے ننھے ظفرکو کھانسی!۔۔۔۔۔۔
وہ تو ابھی دو برس کا ہے۔۔۔۔۔
ارے ننھی تہمینہ کو بھی نزلہ ہے۔۔۔.۔۔۔۔۔
وقت ِ نماز ہوا تو دادا اور نانا بھی نہیں جاگے۔۔۔۔۔۔
ارے دادا تو کراہ رہے ہیں شاید انہیں بخار ہے۔۔۔۔۔
وہ تو بہت ا حتیاط سے نماز پڑھنے جاتے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ِیہ کیسے ہوا۔۔۔۔ آج تو چاچو بھی سست ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ّٰوہ تو 40 برس کے ہیں۔۔۔۔۔۔
انہیں تو کچھ نہیں ہوسکتا۔۔۔۔۔۔۔۔
بہو , بیٹی, ماں اور بیٹے کے قدموں سے زمیں کھسکنے لگی۔۔۔۔۔۔
اب سب کو قرنطینہ جانا ہو گا۔۔۔۔۔۔
بچے رو رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔
سب کے دل ڈوب رہے تھے۔۔۔۔۔
شیطانی کرونا جسموں سےچمٹا مسکرا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ گنگناتے ہوے چہکتے ہوے کہہ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
میں کرونا ہوں میرا کوئ مذہب نہیں۔۔۔۔۔۔میں اک بھیانک وبائ مرض ہوں۔۔۔۔
مجھ سے بچنا ہے تو میرا علاج یہی ہے۔۔۔۔۔ گھربیٹھو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فاصلہ رکھو، عبادت کرنی ہے تو گھر پہ کرو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں کرونا ہوں۔۔۔
میں مذہب نہیں دیکھتا۔۔۔۔۔۔
میرا کوئ مذہب نہیں
۔…………………

Comments are closed.