وبائیں اور بلائیں۔۔۔۔ آزمائش

(پروفیسر سبین یونس)

وبائیں اور بلائیں۔۔۔۔ آزمائش
بصد حکمت بھگائیں آزمائش

کھلا در ہے ہدایت کا۔۔۔۔۔۔ ہمیشہ
تو کیوں نظریں چرائیں آزمائش

کسی کےعیب سے پردہ ہٹائیں
خطا اپنی چھپائیں۔۔۔ آزمائش

کرے کوئی بھلائی منہ پہ ماریں
کریں احساں،جتائیں۔۔۔۔ آزمائش

یقیں جن کو نہیں ہے آخرت کا
ہر اک کا دل دکھائیں۔۔۔۔ازمائش

تماشا جان کر اس زندگی کو
ہنسی میں ہی اڑائیں ازمائش

فرائض چھوڑ اپنائیں مشاغل
کٹھن جینا بنائیں۔۔۔۔۔ آزمائش

نہیں سجدے کی بھی توفیق جنکو
کریں لمبی دعائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ازمائش

بکھرتا جا رہا ہے ۔۔۔۔۔تنکا تنکا
نشیمن خود جلائیں آزمائش

اجڑتی بستیوں کی راکھ دیکھیں
نہ پھر بھی باز آئیں۔۔۔۔۔۔ آزمائش

ذرا سی دیر کو کٹ کر جہاں سے
خدا سے لو لگائیں ۔۔۔۔آزمائش

کیا ہےتجربہ ۔۔۔۔۔۔۔فقر و غنا کا
اسے راہبر بنائیں۔۔۔۔۔۔۔۔ ازمائش

Comments are closed.