خروش ِ آرزو

(محمد نصیر زندہ)

چشمہء دید میں لہلاتے ہیں کھیت انجم کے
آرزو خانہء افلاک چمکتا ہے ابھی
پیکر ِ نوروشِ ناز کا ہے عکس ِ جمیل
جس سے یہ مرتبہء خاک چمکتا ہے ابھی
لمحہء وصل ہے جو دیدہ گردوں کا چراغ
مہر میں تکمہ پوشاک چمکتا ہے ابھی
روزن ِ خواب سے طائوس ِ فسوں جھانکتا ہے
یہ سراب ِ خس و خاشاک چمکتا ہے ابھی
اے خداوند ِ چمن زار مہ و کاہکشاں
مجھے شربِ لبِ گل فام نہیں دیتا، نہ دے
دانہ خال تہہ دام نہیں دیتا ،نہ دے
مژدہء عیش ِ مے و جام نہیں دیتا، نہ دے
رخصت ِ گردشِ ایام نہیں دیتا، نہ دے
اے نگہ دارِ گل و لالہ و آئین ِ بہار
عطر آگیںیہ گزر گاہ فنا رہنے دے
زلف کے ہاتھ میں تزئین ِ صبا رہنے دے
پھول کا خوشبو سے پیمان ِ وفا رہنے دے
شوخیء حسن کا سامانِ ادا رہنے دے
ہائو ہو سے ہے یہ جشن ِ قدح و جام و سبو
حسرتِ رند ِ خرابات کے اسباب نہ چھین
عشوہ ء ناز ِ حسیناں ِ نظر باز ہے خوب
اس تمنا کے درو بام سے مہتاب نہ چھین
تشنہء دید رہیں ہجر میں چشمان ِ خیال
اے خدا مجھ سے عذاب ِ نگہ خواب نہ چھین
نوٹ: کرونا کے درد ناک لمحات میں عالم انسانیت کی کیفیت کا اظہار شاعر نے کلاسیکی مہارت سے کیا ہے

Comments are closed.