ہمیں پُرعزم رہنا ہے

(زیب النساء زیبی)

“ہمیں کرونا سے نہیں مرنا”
۔……… ۔……
کون کہتا ہے ؟
موت کا خوف محبت کو مار دیتا ہے۔۔۔۔۔
وہ میرا ہاتھ تھامے کہہ رہا تھا۔۔۔
حوصلہ رکھو ! کچھ نہیں ہے تم کو ۔۔۔۔
کچھ نہیں ہوگا ۔۔۔۔۔
جسم کو موت آ بھی جاے تو ۔۔۔۔
روح زندہ رہتی ہے۔۔۔
تم نے بھلا یہ سوچا کیسے۔۔۔۔۔
ہم کرونا سے مریں گے ۔۔۔۔
ہمیں پُر عزم رہنا ہے
ہمیں کرونا سے نہیں مرنا۔۔۔۔۔
میں چیخی ! نہیں نہیں مجھ سے دور ہو جاو۔۔۔۔۔
مجھے ایمبولینس منگوا دو۔۔۔۔
کوئ میرے پاس نہ آے ۔۔۔۔
ہاے میرا دم گھٹ رہا ہے ۔۔۔
حلق خشک ہے۔۔۔۔دل بند ہونے کو ہے۔۔۔
شاید مجھے کرونا ہو گیا ہے۔۔۔۔
بس جلدی کرو ۔۔۔۔
ہاے ایمبولینس منگواو۔۔۔۔
میرے جسم میں الیکٹرک شاک دوڑتا ہے۔۔۔۔۔
یہ میری روح کھینچتا ہے ۔۔۔۔
میرے بچوں کو مجھ سے دور کر دو۔۔۔۔۔
ایمبولینس میں ، میں اکیلی جاوں گی۔۔۔۔۔
وہ ماسک لگاے ، دستانے پہنے ۔۔۔۔۔
ایمبولینس میں آ بیٹھا ۔۔۔۔۔
میرے گرتے وجود کو سنبھالا۔۔۔۔۔
ڈاکٹر نے سکوں کا انجکشن دیا ۔۔۔۔۔۔
میں سو تی رہی۔۔۔۔۔
آنکھ کھلی تو وہ پُرعزم لہجے میں بولا ۔۔۔۔
دیکھو! میں نہ کہتا تھا۔۔۔۔۔
تمہیں کچھ نہیں ہو گا ۔۔۔۔
لو دیکھو! ہم دونوں کی رپورٹ نیگیٹو ہے۔۔۔۔۔
بس یاد رکھو !
ہمیں پُرعزم رہنا ہے۔۔۔
ہمیں کرونا سے نہیں مرنا۔۔۔۔۔

Comments are closed.