بے معنی جھوٹی مصنوعی زندگی اور کرونا

(زیب النساء زیبی)

“بے معنی جھوٹی مصنوعی زندگی اور کرونا ”
۔۔۔۔۔۔۔۔…….
موت ! نہیں ابھی ہمیں موت نہیں آسکتی ۔۔۔۔۔
لڑکپن، جوانی، اور پھر بڑ ھاپا، ۔۔۔۔لمبا بڑھاپا۔۔۔۔۔۔
ابھی تو موت دور ہے ۔۔۔۔
بہت دور ہم سے ۔۔۔۔
سب موت کو بھولے ہوے تھے۔۔۔۔۔
زندگی کی رنگینیوں میں گم تھے۔۔.۔۔۔
اور سوچتے تھے ۔۔۔بس یہی زندگی ہے ۔۔۔۔
جی بھر کے جی لو۔۔۔۔. بس آج جی لو
۔۔۔۔۔۔۔
اسٹیٹس، دولت وشہرت ، کی بے ہنگم دوڑ۔۔۔۔
خود کو منوانے کے ہتھکنڈے ۔۔۔۔۔
گیم، فیس بک ، انٹرنیٹ،۔۔۔۔۔۔۔ دوستیاں ،سلفیاں ،
ٹک ٹاک، ۔۔۔۔
رومانس، عیاشی سے بھر پور زندگی۔۔۔
نفسانی خواہشات کو ابھارتے۔۔۔۔۔
افسانے، ناول،ڈرامے,مشاعرے۔۔۔۔۔
میرا جسم میری مرضی کے نعرے ۔۔۔۔
ہیرے،جوہرات، زیورات، ۔۔۔۔۔
زرق برق لبادے،۔۔۔۔۔۔
اطلس و کمخواب۔۔۔
دولت کا بے دریغ استعمال۔۔۔۔۔
انا،غرور،منافقت،….. بے حسی ,قتل و غارت گری…….
چوری چکاری، ڈاکے،چھینا جھپٹی۔۔۔۔۔۔۔۔
بد اعمالی، بد دیانتی، جھوٹ، نفرت۔۔۔۔۔
فرقہ واریت۔۔۔۔۔معصوم بچے بچیوں سے زیادتی اور ان کے قتل۔۔۔۔
کرپشن،لوٹ مار ،نفسا نفسی۔۔۔۔۔۔۔
ملاوٹ، ذخیرہ. اندوزی ،۔۔۔۔
منشیات،فروشی،
شراب نوشی،۔۔۔۔۔
سب سے اگے نکلنےکے شورٹ راستے۔۔۔۔۔۔۔۔
الیکشن جتنے کےنت نئے ہتھکنڈے۔۔۔۔۔
ہر طرف عدل کا خون۔۔۔۔۔
سر عام بکتا ہوا قانون۔۔۔۔۔۔
کب تک نہ رحمتِ خداوندی روٹھتی۔۔۔
دولت و طاقت کا ہر نظریہ ملیا میٹ ہوا
۔۔۔۔۔.۔۔۔۔
امیر و غریب کا فرق مٹ گیا۔۔۔۔۔
بڑی طاقتیں،چھوٹی مملکتیں۔۔۔سپر پاور بننے کے خواب۔۔۔۔۔۔۔
معیشت کی مار۔۔۔
بس مو ت کی زردی۔۔۔۔۔۔
چار سو پھیلنے لگی۔۔۔۔۔۔
کورنا سے زندگی بےمعنی ہوئ۔۔۔۔
یہ زندگی ہے بے حقیقت۔۔.۔۔۔۔
ِیہ ہے بے ثبات۔۔۔۔۔۔
جب بھی وہ چاہے گا۔۔۔۔ ۔۔۔
ہمیں اس کی طرف پلٹنا ہو گا
اس جھوٹی مصنوعی زندگی سے نکلنا ہوگا۔۔۔۔۔
آس طرح کرونا کی وبا سےنبٹنا ہو گ

Comments are closed.