گھر گھر مورچہ

(سید تابش الوری)

گھر گھر مورچہ

ان دیکھا پاگل دشمن ہے

سب کو مل کر لڑ نا ہوگا

ایک انوکھی جنگ چھڑی ہے

اب تو گھر گھر مو ر چہ ہوگا

سید تابش الوری

کچھ تو کہو نا

ڈرے ڈرے گم صُم بیٹھے ہو

کچھ تو کہو نا کچھ تو سنو نا !

پچھلی نصیحت قر بت رکھنا

اب حکمت، نزدیک نہ ہونا

Comments are closed.