یہ بیماری کرونا ہو گئی ہے

(ڈاکٹر کنول فیروز)

یہ بیماری کرونا ہو گئی ہے
ڈاکٹر کنول فیروز (تمغہ امتیاز) لاہور
جو ہونی تھی وہ ہونا ہو گئی ہے
یہ بیماری کرونا ہو گئی ہے
میں پارس ہوں مجھے تم کھو نہ دینا
ملی جو مجھ سے سونا ہو گئی ہے
وسیع تھی زندگی کی بادشاہی
فقط اب ایک کونا ہو گئی ہے
کبھی اس کا ٹھکانہ کنج دل تھا
محبت اب بچھونا ہو گئی ہے
ہماری زندگی اہم تھی لیکن
ترے ہاتھوں کھلونا ہو گئی ہے
سمجھتا تھا جسے قد کے برابر
کنول وہ آج بونا ہو گئی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کرونا
کس کس کو یاد کر کے اب رویا کریں گے ہم
کھونے کو کیا رہا ہے جو کھویا کریں گے ہم
وہ تو چلا گیا ہے کرونا کے ڈر کے ساتھ
بستر پہ اب اکیلے ہی سویا کریں گے ہم

Comments are closed.