تمھارا حوصلہ اور تیز گامی

(اسماعیل دانیال)

(قطعہ)
تمھارا حوصلہ اور تیز گامی
خدائے پاک ہو تم سب کا حامی
بشارت مل گئی جنت کی تم کو
کہ ہے تم کو فرشتوں کی سلامی

فرد شعر

رہیں گے فاصلے پر سات دیں گے
کرونا کو ہم اب یوں مات دیں گے

غزل

یہ لکھی جائے گی ان کی عبادت
ہے پائی جو شہیدوں نے شہادت

کرونا بن کے آیا ہے قیامت
خدا رکھے ہمیں اس سے سلامت

حکومت نے کیا ثابت یہ ہم پر
ہمیں ہے آپ سے سچی محبت

ہیں جو نادان سے دو چار باہر
عطا کر اے خدا! ان کو ہدایت

نہیں ہے فرض ملنا، فون پر بھی
تو ہو سکتا ہے اظہارِ محبت

تین شعر

ایک دن دوستوں میں جو بیٹھے
خوف سے سب ہی دور ہو بیٹھے

پہلے رسماً ملاتے ہاتھ تو تھے
اب تو اس سے بھی ہاتھ دھو بیٹھے

اور کرونا سے کوئی شکوہ نہیں
پر محبت کو ہم جو کھو بیٹھے

Comments are closed.