جیون کی خوشیاں یہ کرونا سب اڑا چکے ہیں

(قاضي حنيف الله حنيف)

نظم ډاکټر قاضي حنيف الله حنيف دې کرونا خو خوند له ټولې زندګۍ اوړے دے
چاته چې ګورمه نو ساګ ترېنه سېلۍ اوړے دے
نه د محفل خوندونه شته نه د يارانو خندا
نړيوال کلي نه خوند رنګ ټول تنهايۍ اوړے دے
داځل سپرلے هم رنګينو سره بې فېضه تېرشو
دا ځل سپرلے هم غريو نيولے دے سلګۍ اوړے دے
نمرود يو ماشي هلاک کړے ٶ اعجاز ٶ د رب
نن ساينس د ټول جهان، وايرس ته حېرانۍ اورے دے
هغه حجرو شنو شنو پټو پسې مو زړه خوږيږي
د زړه قرار د نوي دور ښاپېرۍ اوړے دے
لږ شان آزمېښت دے لږ اختياط او حوصله پکار ده
شپه به رڼا شي وريځې نور لږ د سېوږمۍ اوړے دے
په دې سخت وخت کښې چې خدمت کښې څوک د قام لګيا دي
مونږه خپل زړه د خلوص ډک ورله ډالۍ اوړے دے
—————–

اردو ترجمه
جیون کی خوشیاں یہ کرونا سب اڑا چکے ہیں
سب اپنے چہروں پہ ایک خوف سا سما چکے ہیں
نہ تو محفل میں وہ سرور اور نہ جوش یاراں
کہ جیسے رنگ و بو جہاں سے کہیں جا چکے ہیں
اب کے برس موسم بہار بھی بے فیض رہا
اب کے برس وہ اپنے ساتھ الم لا چکے ہیں
رب نے نمرود کو مارا تھا ایک مچھر کے طفیل
ساینس حیراں کہ کیسے ویرس ڈیرے پا چکے ہیں
کھیت کھلیاں شاداب، حجرے ہوں آباد پھر سے
سب کا اس دور کی پریاں، قرار اڑا چکے ہیں
تھوڑا سا آزمایش ہے بس حوصلہ اور اختیاط کرنا
بادل بس کچھ چاند کے اوپر اب منڈلا چکے ہیں
خدمت ملت میں مصروف سرفروشوں کو
دل کے نظرانے ہم بھی پیار سے دلا چکے ہیں

Comments are closed.