اگر دنیا ختم ہو جائےگی تو کیا بنے گا

(پروفیسر ڈاکٹر اصغر علی بلوچ)

جے دنیا مک گئی تے کیہ بنے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حالے تے میں لکھنا ایں انساناں بارے
حالے تے میں لکھنا ایں نویں جہاناں بارے
حالے تے میں چھوہنا ایں سنگیت نواں
حالے تے میں لکھنا ایں اک گیت نواں
میریاں لکھتاں ‘ پڑھتاں دا فر کیہ بنے گا ؟
جے کر دنیا مک گئی تے کیہ بنے گا ؟
نکیاں وڈیاں گلاں حالے کرنیاں نیں
وگدیاں کھونہاں خالی ٹنڈاں بھرنیاں نیں
حالے تے ساون دیاں بدلیاں ورہنیاں نیں
حالے تے دل نوئیاں سٹاں جرنیاں نیں
سوچ رہیا واں دنیا جے کر مک جاوے گی
ان لکھیاں ان کہیاں گلاں
اسماناں تک الریاں ولاں
دل دریا دیاں اتھریاں چھلاں
دھوڑ دھمالاں پاندیاں تھلاں
اڈ پڈ جاسن چنیاں ‘ پگاں
ہر پاسے لگ جاسن اگاں
سوچ رہیاں واں دنیا جے کر مک جاوے گی
تیرے سوہنے مکھ دی لو دا کیہ بنسی
سجرے پھلاں دی خشبو دا کیہ ببنسی
سوہنیا ربا ! جے کر دنیا مک جاوے گی ؟
پر ایہ دنیا مک نہیں سکدی
جیون دی نیں سک نہیں سکدی
سورج ڈھلدا ائے شاماں آون
راتاں جان سویراں آون
ایہ ویلا وی انج نہیں رہناں
اک دن سنگتاں رل مل بہناں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ترجمہ و مفہوم
اگر دنیا ختم ہو جائےگی تو کیا بنے گا؟
ابھی تو میں نے انسانوں کے بارے میں مزید لکھنا ہے
ابھی تو میں نے نئے جہانوں کے بارے میں لکھنا ہے
ابھی تو میں نے نیا سنگیت چھیڑنا ہے
ابھی تو میں نے ایک نیا گیت لکھنا ہے
میری تحریروں اور آموختے کا کیا بنے گا ؟
اگر دنیا ختم ہو جائے گی تو کیا بنے گا؟
ابھی تو میں نے چھوٹی بڑی بہت سی باتیں کرنی ہیں
ابھی تو بہتے کنوؤں نے بہت سی خالی جھاجھریں بھرنی ہیں
ابھی تو ساون کی بدلیوں نے مزید برسنا ہے
ابھی تو دل نے بہت سی نئی چوٹیں سہنی ہیں
سوچ رہا ہوں اگر دنیا ختم ہو جائے گی تو کیا ہو گا؟
ابھی تک تو بہت سی ان لکھی اور ان کہی باتیں ہیں
آسمان تک بیلیں جھکی ہوئیں ہیں
دل دریا کی متلاطم لہروں
اور دھول اڑاتے ریگستانوں کا کیا ہو گا ؟
سروں پر پہنی رداؤں اور دستاروں کا کیا بنے گا؟
اگر یہ دنیا خاکستر ہو جائے گی تو کیا ہوگا؟
سوچ رہا ہوں اگر یہ دنیا ختم ہو جائے گی تو کیا بنے گا ؟
تیرے خوب صورت چہرے کی لو کا کیا بنے گا
تازہ پھولوں کی خوشبو کا کیا بنے گا ؟
اے خوب صورت رب ! اگر دنیا ختم ہو جائے گی تو
کیا ہو گا ؟
لیکن مجھے یقین ہے کہ یہ دنیا یونہی قائم رہے گی
زندگی کی یہ ندی یونہی بہتی رہے گی
جس طرح سورج ڈوبنے کے بعد شام آتی ہے
اسی طرح راتوں کے بعد سویرے آتے ہیں
یہ ( برا) وقت بھی اس طرح نہیں رہے گا
ایک وقت آئے گا جب دوستوں کی ٹولیاں مل جل کر ایک ساتھ رہیں گی

Comments are closed.