وائرس بھی ہے گیان بھی ہم بھی

(پروفیسر ڈاکٹر اصغر علی بلوچ)

وائرس بھی ہے ‘ گیان بھی ‘ ہم بھی
مرگ آسا مچان بھی ‘ ہم بھی
خواہشوں کا جہان بھی’ ہم بھی
اک اچٹتا دھیان بھی’ ہم بھی
سلسلہ ہائے خوف و دہشت میں
قید ہے اپنی جان بھی ‘ ہم بھی
سب کرونا کی زد پہ آئے ہیں
اہلِ جبہ و شان بھی ‘ ہم بھی
گھر چکے ہیں بلا کے نرغے میں
مقتدر ‘ حکمران بھی ‘ ہم بھی

دیر و کعبہ و مسجد و مندر
چپ ہے یہ خاکدان بھی ‘ ہم بھی
کتنے خاموش ‘ کتنے ویراں ہیں
یہ زمان و مکان بھی ‘ ہم بھی
تخلیے اور مراقبے میں ہیں
اب سبھی مہربان بھی’ ہم بھی
اب نئے موسموں کی دھن میں ہے
طائروں کی اڑان بھی’ ہم بھی

کر رہے ہیں طوافِ مئے خانہ
رند بھی ‘ زاہدان بھی ‘ ہم بھی
جمع ہونے پہ بھی ہے پابندی
تنگ ہیں پاسبان بھی ‘ ہم بھی
رقصِ وحشت ہے چار سو جاری
ہم قدم پارسان بھی ‘ ہم بھی
دے رہی ہے پیامِ بے داری
صبحدم کی اذان بھی’ ہم بھی
چلہ کش ہو گئے ہیں سب اصغر
دوست بھی ‘ خاندان بھی’ ہم بھی

Comments are closed.