قرنطینہ میں تنہا تنہا

(ظفر منصور)

غزل
دکھ سکھ سب کا تنہا تنہا
ہنسنا رونا ، تنہا تنہا
آہٹ ہے نہ سایہ کوئی
لمبا رستہ ، تنہا تنہا
کھڑکی میں اک یاد کا دیپک
جلتا بجھتا ، تنہا تنہا
پت جھڑ ہے یا ہجر کا موسم
پتا پتا ، تنہا تنہا
برسوں بعد اسے دیکھا ہے
اجڑا اجڑا ، تنہا تنہا
شہر میں پھرتا ہے اک شاعر
دیوانہ سا ، تنہا تنہا

Comments are closed.