پھول آج بھی کھلتے ہیں

(علی رضا بلوچ)

ایہہ میلے فیر لگنے نیں
( علی رضا بلوچ)
اجے وی روز پھل کھڑدن
پرایہنا دی مہک حالے ترسدی اے
کہ سانوں کوئی تے آ سنگھے
کہ سانوں کوئی تے آویکھے
اجے گھن چھاویں رکھاں دے
نویں پتر وی اگدے نیں
پر ایہنا تھلے اوہ سنگتاں
اوہ بیلی یارنہیں بہندے
اوہ ڈیرے وچ پئے حقے
وی ہن گڑگڑ نئیں کردے
اوہ میلے ساڈیاں پنڈاں
دی جیہڑے شان ہندے سن
اوہ میلے مک گئے سارے
اوہ ویلے مک گئے سارے
بڑے تھوڑے جیہے ویلے دے لئ
انج ہوگیا اے
اڈیکاں جیندیاں نیں میریاں اکھاں
دے پچھلے موڑ دے اتے
جدوں اس موڑتے کوئی
کسے نوں واج مارے گا
تے پاروں پات بنھ کے
ویکھ لئیں کونجاں دیاں ڈاراں
تے سب رسیاں بہاراں آ ای جانا اے
جے سورج روز چڑھدا اے
تے فیر اک دن بہاراں نوں
میرے گھر آونا پونائیں
ایہہ میلے فیر لگنے نیں
ایہہ حقے فیر بھکھنے نیں.
———–
ترجمہ.
پھول آج بھی کھلتے ہیں
مگر انکی خوشبو اپنے چاہنے والوں
کو ترس رہی ہے حسن تعریف کے بغیر گمنام
ہوجاتا ہے کھلے پھولوں کو مشتاق آنکھوں کی ضرورت رہتی ہے
جو انہیں اس عہدِ پرساں بھی میسر نہیں
اب بھی گھنی چھاؤں والے تناور درختوں پر شاخیں اور تازہ
کونپلیں اگتی ہیں
اگر اس شفیق و مہرباں چھاؤں کو
اس محرومی کاشدید احساس ہے کہ
اب اسکے سایہ تلے بیٹھنے والے
وبا کے خوف سے گھروں میں مقید ہیں
گاؤں کے داروں اور ڈیروں پر
تازہ چلم کے حقے کے گرداگرد
اب ان بڑے بوڑھوں اور
وڈیروں کا ہجوم کہیں دکھائی نہیں دیتا
دیہاتوں میں لگنے والے میلے جوہماری تہذیب
اورثقافت کے علمبردار تھے اب عارضی بندش کا شکار ہو
گئے ہیں
وہ خوشگوار اور میل ملاپ کے زمانےگزر گئے
یہ محض چند دنوں کامعاملہ ہے
میری آنکھوں کے کسی تہہ خانے میں امیدیں اب بھی زندہ ہیں
جب کوئی پارکھ اور ان مشکلوں کا حل جاننے والا پکارے گا
تو یہ بچھڑے لوگ اور روٹھی بہاریں
کونجوں کے جھنڈوں کی طرح قطار اندر قطار لوٹنا شروع
ہوجائینگی
اگر سورج طلوع ہوتا ہے تو پھر دیکھ لینا
ان بہاروں کومیرے بھولے بسرے گھر کی یاد ضرور آئے گی
اور ازسرِ نو یہ میلے لگنے شروع ہوجائینگے
اورحقے تازہ گڑگڑانے لگیں گے.

Comments are closed.