کچھ عرصہ گھر میں رہیں

(نُورالاسلام سنگر)

نظم ۔۔۔۔۔کوووډ.. ۱۹

څه موده کور کښې کښېنئ
خپلو هم ذادو ادم ذادو سره
فطرت خپل رنګ ورک شوے رنګ لټوي
د دریابونو او ویالو اوبو دمه بیا مونده چې کشتۍ اودرېدلې
ګرد د مودو ئې تَل کښې کښېناستلو
لارې کوڅې چې وې مدام
شور او لوګو نه ډکې
د خاموشۍ فضا کښې ساه اخلي
له خوف او ډار دې وېرېدلے ترخیدلے مخلوق بیا د ژوند سندرې وائي
زمکه د اوښکو په شبنم
تراخه زخمونه وینځي
شپه د سپوږمۍ په صابون
ځانله لاسونه وینځي
څه موده کور کښې کښېنئ
خپلو هم ذادو ادم ذادو سره
خپلې بقا د ژوند بقا له پاره
نور په جهان کښې زهر مه خوَرَوئ

————-
پشتو نظم اردو ترجمه : کوووڈ- ۱۹

کچھ عرصہ گھر میں رہیں
اپنے ہم ذاد، آدم ذاد کے ساتھ
فطرت اپنے رنگ تلاش رہا ہے
سمندروں اور نہروں کے پانی نے قرار پایا ہے زمانوں کا گرد تہہ ِ آب بیٹھ گیا
وہ سڑکیں اور تمام راستے
جو شور اور دھوئیں کی الودگی سے ڈھکی تھی خاموش فضا میں سکھ کا سانس لے رہی ہے حیواں اور پرندے جو انسانوں کی خوفزده تھے اب ازادانہ زندگی کے گیت گا رہے ہیں زمیں آشکوں کے شبنم سے
جسم کے زخم دھو رہی ہے
رات چاند کے صابن سے
ہاتھ دھو رہی ہے

کچھ عرصہ گھر میں رہیں
اپنے ہم ذاد، آدم ذاد کے ساتھ
اپنی بقاء اور حیات کی بقاء کے لئے
جھان ِ خاک میں پھیلائیں نہیں زھر اور

Comments are closed.