مگر سحر تو ہونی ہے

(زیب النساء زیبی)

اے اکادمی ادبیات کے معزز ممبران ِ جیوری اور ججز ۔۔۔۔۔
میرے “حرف دعا” کو کوئ اعزاز و ایوارڈ نہیں درکار ۔۔۔۔
بس یہی ہے آرزو میری ۔۔۔
ہم سب کے دلوں کی رب دعا قبول فرماے ۔۔۔۔
زمیں کے ذرے ذرے کو ۔۔۔۔
“کرونا تباہی” سے نجات مل جاے ۔۔۔۔
انسانیت کو اس وبا سے جو خطرہ ہے ۔۔۔۔
وہ خطرہ ٹل جاے ۔۔
یہ احتیاطی تدبیریں اپناتے ہوے ۔۔۔۔
ہاتھ دھوتے ، وضو کرتے، نمازیں پڑھتے ، ۔۔۔۔۔
دلوں کی کدروتیں مٹاتے ۔۔۔۔۔
تلاوت ِ قراں کرتے ۔۔
مرے وطن کےسادہ لوح ۔۔۔۔
تیری طرف دیکھتے ہیں ۔۔۔۔۔
یہ میری “پاک دھرتی” اور اس کے صف ِ اول کے یہ بے لوث مسیحا۔۔۔۔
یہ فوجی ، ڈاکٹر ، نرسیں ، اسٹاف پولیس ،۔۔۔۔
صحافی، سیاسی اور سماجی کارکن ۔۔۔۔
اور یہ بھوک سے بلکتے، سسکتے راشن کے منتظر ۔۔۔۔
غربت کے مارے ، مفلس و بے بس بے چارے عوام ۔۔۔۔
یہ ملازمتوں سے ہاتھ دھوے مجبور و لاچار مرد و زن۔۔۔۔
گھروں میں بند لاک ڈاون ، سیل ایریا ، اور کرفیو سے تنگ ، نفس ۔۔۔۔
قرنطینہ میں آس و یاس کی کش مکش میں گھرے
مر یض ۔۔۔۔۔
اُن کے خاندانوں پہ ٹوٹتی ہوئ
قیا متیں ۔۔۔۔۔
اور بھوک، بے روزگاری، موت سے لڑتے ہوے یہ بہادر پاکستانی ۔۔۔۔
دیار ِ غیر میں اپنی مٹی کو ترسے ہوے ۔۔۔جدائ کے غم کو دل میں چھپاے ۔۔۔۔
اپنے ماں باپ بہن بھا ئیوں سے دور کرونا سے لڑ رہے ہیں ۔۔۔۔۔
اپنے پیٹ کاٹ کے کرونا فنڈ میں رقوم بھر رہے ہیں ۔۔۔۔
اور پھر مخیر حضرات، سماجی تنظمیں ، تاجر صاحب ِ ثروت ہماری قوم کے ہیرو ۔۔۔۔
موت کی آنکھوں میں آنکھیں ڈالے پہلی صفوں میں سینہ سپر کھڑے ہیں ۔۔۔۔۔
یہ سب کے سب
باحوصلہ ہیں ۔۔ایمان پختہ ہیں ، پُرعزم ہیں ۔۔۔
جو ہیں زندہ ضمیر ، دلوں کے اجلے ، امانت دار ، نیک ، شریف النفس ، خوف ِ خدا والے ۔۔۔۔۔
وہ سب کے سب اپنے اپنے گناہوں پہ پشیماں ، غلطیوں پہ شر مندہ ۔۔۔۔۔
ترے دربار میں
سرنگوں ہیں ۔۔۔۔۔
یہ سجدوں میں جُھکے ، سسکیوں ، آہوں ،فر یادوں میں ہیں نوحہ کناں ۔۔۔۔۔۔
ان کی صدائیں یوں رائیگاں تو نہیں
جا ئیں گی ۔۔۔۔۔
ہاں مانا “اے کرونا” تری شب ِِِ تیرگی بہت گہری اور لمبی ہے ۔۔۔۔۔
مگر سحر تو ہونی ہے ۔۔۔۔۔
گو سامنے ابھی اک دھندلکا ہے ۔۔۔۔۔
موت کا سنا ٹا ہر سو بکھرا ہوا ہے ۔۔۔۔۔
ہاں موت ! اور موت بھی ایسی ۔۔۔۔.
موت کی سختی ! اور ایسی سختی ۔۔۔۔
گھٹ گھٹ کر دم نکلنا ، ۔۔۔۔۔
بنا وینٹلیٹر بنا اوکسیجن اور ادویات ۔۔۔۔۔
سسک سسک کر دم توڑ دینا ۔۔۔۔
اپنوں پیاروں، عزیزوں دوستوں
اور. محبت کرنے والوں سے ۔۔۔۔
جدا ہوتے، بچھڑتے یہ دن بدن بڑھتے ہوے لاشے ۔۔۔۔۔
کہیں جواں ، کہیں بو ڑھے ،اور اب یہ ننھنے بچے ۔۔۔۔۔۔
مشترکہ خاندانوں کا اس وائرس میں مبتلا ہونا ۔۔۔۔
کلیجہ شق ہوتا ہے ، دل ڈوبتا ہے۔۔۔۔۔ جسم لزرتا ہے ، قلم چلتا نہیں۔۔۔۔۔۔
نہ کفن ، نہ کاندھا ،نہ لحد ، نہ دیدار ۔۔۔۔۔
نہ اپنے پیاروں سے لیپٹنا ، نہ اظہار ِ محبت، ۔۔۔۔۔۔
نہ تیمارداری ، نہ دلداری، نہ وفا شعاری ۔۔۔۔۔۔
عجب سماں ہے ۔۔۔۔
تنہائ ، جدائ ، ویرانی ، اداسی۔۔۔۔۔
اے رب ِعالم ! اس عالم کو ۔۔۔.
اب اس وبا سے نجات دے دے ۔۔۔۔۔
ان مفلسوں ،مظلموں،
معصوموں ، بچوں، بے گناہوں کو بخش دے۔۔۔۔۔۔
تیرے در پہ جھکنے والے ، اپنے اعمال پہ شرمسار ہیں ۔۔۔۔۔
پشیمانوں ، عا صیوں کی دعا قبول کر لے ۔۔۔۔
اس کرونا سے نجات دے دے ۔۔۔۔
ہاں نجات دے دے ۔

Comments are closed.