تنکوں کی طرح بکھرے ہوئے

(محمد ابراہیم کھوکھر)

We were divided into dices,
And had different destinations to decide
All of sudden we were forced to unite
And now in solidarity we feel pride.

The pandemic woke us from slumber
And now we stand united to fight
The challenge is tough, we all know
But now we have learnt what’s right.

The world is never the same yet
We have learnt many lessons of life.
All our vanities and wins are wasted
And we have now tougher tides of strife.

As a nation we stand united to fight
This worst enemy of entire human race.
We adopt all measures of precautions
And are ready to this challenge face.

Physically distanced but intellectually United
Our strategy is to join hands online.
We continue celeberating our love and life
Till the rest of the world feels fine.

We are not afraid of this new challenge
As we are the living and brave nation.
We trust our abilities and have strong faith
Of winning this challenge in a new fashion.

Urdu translation.

تنکوں کی طرح بکھرے ہوئے
ھر ایک کو اپنی منزل کا سفر تھا
پھر اچانک یوں ھم ایک ھوے
کے اپنی یکجھتی پر ھمیں فخر تھا

کرونا نے ھمیں جگایا سونے سے
اور اب ھم متحد ہوکر لڑیں گے
ھماری منزل کٹھن اور سفر مشکل ھے
اب ھم سب حق کے ساتھ جڑیں گے

دنیا اب وہ پرانی نھیں رھے گی
زندگی کے نئے سبق سیکھنا پڑیں گے
ھماری ساری مستی،منزلین رسوا ھو گئی
نئے دور کے نئے طریقے سیکھنا پڑیں گے

ایک قوم کی طرح متحد ہوکر لڑنا ہے
انسانیت کے دشمن کو ھرانا ھے
ساری احتیاطی تدابیر اختیار کر کے
ھمت سے اس مرض کو گرانا ھے

قدرے دور مگر ھم سب جڑے ہوئے ہیں
اب نئے طریقے سے یہ جنگ جیتیں گے
آ ن لائن ھوگا کاروبار اور پیار اپنا
دنیا میں امن کے نغمے ھم سینچین گے

اس خطرے سے بلکل ڈرنا نہیں ہے
کیونکہ ھم ایک زندہ قوم ھیں
ھمیں کرنا ھے یقیں محکم پر عمل
کیونکہ جیتنے والی پائندہ قوم ہیں۔

Comments are closed.