ھمیں اپنا کام کرنے دو

(حمیرہ نور)

اس جھان میں
ھمارا کون ھے؟
نا گھر نا چھت،
نا ماں نا باپ،
نا بہن نا بھاٸی،
نا رشتےدار
نا تعلیم نا روزگار،
نا عزت نا حیثیت
بس نام کے انسان ھیں
ھم لوگ
نا تین میں نا تیرہ میں
ھمارے نام پے
نا جاٸیداد نا کوٸی ملکیت
نا زکوات نا خیرات
ھم لوگوں کو تو
صرف تین کام آتے ھیں
ناچ گانا، بھیک مانگنا
اور
دعاٸیں بد دعاٸيں دینا
ھم کیا کریں؟
ھمیں وراثت میں
یہ ھی تين چیزیں ملی ھیں
اب ظاھر ھے
ھم بانٹيںگے بھی
وہ ھی کچھ
جو ھمارے پاس ھے،
اس برس
زندگی ميں
پہلی بار ایسا ھوا ھے کہ
ھم گھروں ميں قید ھوگٸے
اور اچانک
بھیک مانگنے کے
سارے راستے بند ھوگٸے
کرونا نے لوگوں کی
خوشیاں چھین لی ھیں
اور ان خوشیوں کے پیچھے
ھمارا رزق لکھا ھوا ھے
اِس وقت اس جھان ميں
خوشیاں نہيں تو
ھمارا رزق بھی نہيں
ھم رزق کی تلاش ميں
کہاں کہاں جاٸیں!!!!؟
کل تين روز گذرنے کے بعد
بوکھ نے بہت ستایا
تو میں بھی
اس طرف چلی گٸی
جھاں راشن بانٹا جا رھا تھا
لوگوں نے دھکے دٸیے
برا بھلا بھی کہا
اور ميں آنسو بہاتی ایک طرف
کھڑی ھوگٸی کہ
رش کم ھو تو
زکوات مانگوں خیرات مانگوں
اور آخر کار
میرا بھی نمبر آگیا
آگے بڑھ کر
ميں نے اُس آدمی تک
رساٸی حاصل کرلی
اور ھاتھ آگے پھلایا
اس آدمی نے مجھے
جانے کا اشارہ کیا
اور کہا
یہ زکوات
بیواھوں اور یتیموں کے لیے ھے
جاٸو جاٸو
اپنا کام کرو
ھمیں اپنا کام کرنے دو۔

Comments are closed.