شہرِ سخن خموش ہے راہِ سفر اداس

(شوکت محمود شوکت)

غزل
شہرِ سخن خموش ہے راہِ سفر اداس
دل ہیں بُجھے بُجھے سے ، تو روح و نظر اُداس

یا رب ! وبائے ہجر ، تعطل پذیر ہو
ہم ہیں اِدھر اداس تو وہ ہیں اُدھر اداس

ایسا خزاں رسیدہ ہے باغِ جہاں تمام
طائر قفس میں قید ہیں ، ہر اک بشر اُداس

وہ حسن ہو کہ عشق ، تماشا لگے عجب
دشتِ جنوں خجل ہے ، وجودِ گہر اُداس

چشم آشنائے حیرت و حسرت ہے ان دنوں
یوں روز و شب اُداس ہیں شام و سحر اُداس

وا حسرتا ! کہ خوفِ اجل سے فراعنہ
کنجِ مکانِ خستہ میں ہیں بیش تر اُداس

جن کی نظر میں شوکتِ دارائی ہیچ تھی
پھرتے ہیں وہ بھی آج یہاں در بدر اُداس

اب سوگوار زیست کا عالم نہ پوچھیے
آنگن ہیں سُونے سُونے ، تو سارے ہیں گھر اُداس

شوکتؔ ! خیالِ یار نے بخشی ہے زندگی
ورنہ فضائے دہر تھی مہلک اثر ، اُداس

Comments are closed.