ایک لمحے کا سفر ہے دنیا

(پروفیسر ڈاکٹر اصغر علی بلوچ)

ایک لمحے کا سفر ہے دنیا
سطر سادہ کی خبر ہے دنیا
ایک نظارہ دمِ آخر کا
اک اچٹتی سی نظر ہے دنیا
خاک در خاک زمانے سارے
خواب کے زیرِ اثر ہے دنیا
ہے ادھر موت کا بے انت خلا
اور زنداں سی ادھر ہے دنیا
میرے حصے میں ہے کتنی آئی ؟
خالقِ دنیا! اگر ہے دنیا
چھوڑ دیتا میں اسے مرضی سے
اے مرے دوست! مگر ہے دنیا

Comments are closed.