جو نہ ہوتا تھا کام ہو گیا ہے

(نعیم رضا بھٹی)

وباء کے تناظر میں

جو نہ ہوتا تھا کام ہو گیا ہے
ہاں مرا انہدام ہو گیا ہے

یہ خبر اڑ رہی ہے چاروں طرف
موت کا انتظام ہو گیا ہے

نظر انداز کرنے والوں سے
رابطہ ہی تمام ہو گیا ہے

خود ہی زنجیر ہو رہے ہیں ہم
کیونکہ آقا غلام ہو گیا ہے

اب قدم اٹھ نہیں سکیں گے رضا
وقت جو بے نیام ہو گیا ہے

Comments are closed.