ھاتھوں میں دے کے ھاتھ چھڑانے پہ ھے بضد

(عامر عباس ناصر اعوان)

غزل
ھاتھوں میں دے کے ھاتھ چھڑانے پہ ھے بضد
کیوں مجھ سے اتنا دور تو جانے پہ ھے بضد
نخرے تیرے عروج کی منزل کو چھو رھے
دل پھر بھی تیرے ناز اٹھانے پہ ھے بضد
دشمن همارے پيار کی کهيتی اجاڑ کر
نفرت کے کتنے پیڑ لگانے پہ ھے بضد
میں نے چھپا لیا تمہیں جتنا چھپا سکا
چرچا تیرا تو شہر کو آنے پہ ھے بضد
تجھ کو نہ بھول پائے گا اے میرے ھم نفس
ناصر تو تجھ سے ھاتھ ملانے پہ ھے بضد

Comments are closed.