رونقِ گل کھو گٸی ہے باغباں نابود ہے

(محمد خالد خان)

رونقِ گل کھو گٸی ہے باغباں نابود ہے
سب پرندے اڑ گٸے اب آشیاں نابود ہے

برگ و بارِ کُل چمن گریہ کناں ہے اب یہاں
سینہءِ ہستی میں کچھ سوزِ تپاں نابود ہے

گُل نے کب دیکھی تھی یہ بےوقت کی فصلِ خزاں
گلُ پہ کیا موقوف ہے سب گلسِتاں نابود ہے

دیکھئے تو ہر طرف آشوب ہے ہر شہر میں
ہاں مگر لمحہ خوشی کا اب یہاں نابود ہے

حال سے بےحال ہیں خلقِ جہاں کچھ اس طرح
ہر کسی کے دل میں عشرت کا جہاں نابود ہے

نغمہءِ خوش کُن کی اب باقی نہیں ہے آرزو
جب سُرودِ رفتہ کی ہر داستاں نابود ہے

محفلیں ویران ہیں یاروں کے یارانے گٸے
اب یہاں بزمِ مسرت کا نشاں نابود ہے

خاک اڑتی رہتی ہے بازار میں اب صبح شام
باعثِ رونق جہاں کی ہر دکاں نابود ہے

دیکھ کر ویرانیاں آٸی صدا ہے غیب سے
میہماں نابود ہے تو میزباں نابود ہے

ایک اک کر کے بچھڑتے جا رہے ہیں لوگ سب
جس مکاں میں زندگی تھی وہ مکاں نابود ہے

کیا زمیں پر ہے کوٸی سایہ کسی آسیب کا
ایسے لگتا ہے کرم کا ساٸباں نابود ہے

چل رہی ہیں کشتیاں کس آس میں، کس کو پتہ
جب ہواٸیں ہیں عدم اور بادباں نابود ہے

شال اوڑھے خوف کی ہر جسم محوِ یاس ہے
جب وجودِ زیست سے ہر اک مکاں نابود ہے

ہر گلی کوچے میں جاری ہے یہاں رقصِ اجل
سانس لیتا تھا کبھی جو جسم وہ نابود ہے

تھا جو مسجودِ مَلائک وہ بھی اب عاجز ہوا
جدَّتِ دوراں کا ہر اک ترجماں نابود ہے

مسجد و مندر، کلیسا سب مقفل ہوگئے
حسرت و امید کا ہر آستاں نابود ہے

مانتے ہیں دہریے بھی اب وجودِ لم یزل
برملا جن کا گماں تھا لامکاں نابود ہے

اے خداۓ واحد و غفار ہم پر رحم کر
بود و نابودِ یقیں سے بس گماں نابود ہے

معجزے کا منتظر خالد سراپا ذوق ہے
عالمِ خورشید سے لیکن اماں نابود ہے

Comments are closed.