انسانی تاریخ مختلف قسم کے جنگوں سے لبریز ہے

(امير رزاق امير)

د کرونا په حواله څو شعرونه

انساني تاريخ زپلي دي جنګونو
وباګانو بلاګانو او رنځونو

دا کنډري چي مندي شي په ميرو کښي
دا تاريخ دي د خاموشو اوازونو

يو د ژرندي پل په عرش دي بل دا فرش دي
دا ميچنه ده سرخيږي په سرونو

سر د زمکي څو څو ځله آباد شوي
بيا وران کړي څو څو ځله آفتونو

ننني دنيا يو کلي حسابيږي
وطنونه حسابيږي په کورونو

هر سړي نن د يونان هغه ګنجي دي
وړي د لاس تلي کښي غرونه د علمونو

د يوي ګوتي په سوکه هر څه کيږي
دا ميوي دي د تحقيق د کمالونو

نن ګران شوي چرته جام سفال نشته
دي غالب ساغر جم په کثرتونو

مونږه وي دلته په مينه پابندي ده
دا خبره نن ريښتا کړله وختونو

وبا سخته پابندي په لاس کښي راوړه
چک چونګاره او په غاړه په لاسونو

دا غزل د امير يوسي ليبارټري ته
کرونا ي کړه داخله په شعرونو

————-
انسانی تاریخ مختلف قسم کے جنگوں سے لبریز ہے کبھی وبا پھیلتی ہے تو کھبی آسمانی آفتیں قسما قسم بیماریوں کی صورت میں آسمانوں پر زمین کر دیتی ہیں۔ پہاڑوں کے دامنوں میں کھنڈرات اس طرح کے حالات اور واقعات کی خاموش آوازیں ہیں۔ یہ خاموش تجریدی صدائیں دلوں کے کانوں میں اس طرح نوحہ خواں ہیں ۔ کہ چکی کا ایک پل عرش اور دوسرا پل زمین کا یہ فرش ہیں انسان زمین اور آسمانوں کے ان دو پلوں کے درمیان رگڑے جا رہے ہیں یہ دنیا کئ دفہ آباد ہوگئی ہیں اور مصایب کی وجہ سے کئ دفہ برباد ہو چکی ہیں آج کل کی مترقی منازل سے دنیا کی بار گزری ہوئی ہیں ۔ آج ترقی کے منازل طے کر کے ساری دنیا ایک گاؤں میں تبدیل ہوگئی ہے اور دنیا میں موجود ممالک اس گاؤں کے گھر مانے جاتے ہیں آج پھر دنیا کے ہر فرد کا علمی حیثیت یونان کے اس گنجے کا ہے ۔ جس کے کف دست میں مختلف قسم کے علوم موجود ہوا کرتے تھے ۔ آج بھی عام آدمی کے کف دست میں علوم کے بہت وزن دار پہاڑ موجود ہیں اس سے بھی بڑھ کر انگلی کی جنبش میں وسیع وعریض علوم دستیاب ہیں اور یہ سب کچھ تحقیق کے کمالات کے انمول ثمرات ہیں جام سفال سے جام جمشید زیادہ اور ارزاں ہیں ساغر جم اس قدر غالب ہیں کہ غالب اگر دوبارہ آجاے تو ساغر جم کی کثرت اور بھر مار پر پتہ نہیں ، کیا فتویٰ دیں گے ۔ بہر حال ہم شاعر اکثر کہا کرتے تھے کہ محبت کرنے پر بڑی بابندی ہے چونکہ ہر چیز ترقی کے منازل طے کرتی ہیں اس لیے محبت پر پابندی نے عملی شکل اختیار کر لی ہے یہ وبا ھاتھ میں نئ خبر لے کر آئ ہیں کہ خدا را خود بھی بچنے کی کوشش کرو اور اپنے رشتےداروں ، پرستاروں اور چاہنے والوں کو بھی بچا کے رکھو ۔ ہاتھ ملانے گلے ملنے اور چھومنے سے پرھیز کریں محبت کو زندہ رکھنے کی خاطر اپنی احتیاطی اور حفاظتی تدابیر اختیار کریں۔ میں نے اپنی اس نئ غزل میں کرونا لفظ استعمال کر دیا اور کرونا پر اشتہار کہیں ایسا نہ ہو جائے کہ میرے لفظوں میں کرونا داخل ہونے سے میری شاعری کے انمول نظموں اور غزلوں کو کرونا لگ جائے۔۔۔۔
لفظوں میں زکر کرونا آیا
میری نظموں کو کرونا نہ لگے

Comments are closed.