یہ کس عتاب سے گذرا ہے کاروانِ حیات

(شکیل کالاباغوی)

یہ کس عتاب سے گذرا ہے کاروانِ حیات ؟
یہ کس عذاب میں ڈوبا ترا جہانِ ِ حیات؟
۔۔۔۔
نہ عرش پر ہے مداوا، نہ فرش پر ہے اماں!
یہ کس سحاب میں اڑتا ہے خاکدانِ حیات ؟
۔۔۔۔۔
نہ بزمِ ذکر و ثناء ہے نہ لمسِ خاکِ متین!!
سڑا گلاب ہوا ہے یہ عطر دانِ حیات!!
۔۔۔۔۔
شَرَف ملے گا ہمیں کب نویدِ رحمت کا ؟
تری جناب میں لایا ہوں عرض دانِ حیات !
۔۔۔۔۔۔
قبول کر لے تُو مالک صداے عرضِ شکیل!!
کہ قلبِ خاک سے ابھرے نئی اذانِ حیات !!
۔۔۔۔۔۔

Comments are closed.