فطرت کا رنگ

(طیب اللہ خان)

د فطرت رنګ

………………………

بهر سپرلې شو انسانان واړه په کور ناست دي

ښه په قراره دي يو خوا له شر او شور ناست دي

که څوک په خوښه باندې ناست دي که په زور ناست دي

د ښکاره ستړي په کورونو کښې وزګار ناست دي

مارغان خوشحاله دي په امن کښې قرار ناست دي

نن د موټرو او بټو هغه لوګي نشته دی

بارود خاموشه دي ماحول هغه جنګي نشته دی

هوا پراخه ده صفا ده زړۀ تنګي نشته دی

پاک شنه ځليږي بارانونو بوټي ټول وينځلي

هم ئې ګلونه د ريدي او د غانټول وينځلي

چې ټول ماحول ئې وو سېزلې هغه اور غلی دی

نن د لاريو د انجڼو هغه شور غلی دی

د زوره ورو چې غوغا وه هغه زور غلی دی

د جنګ ګواخونه هم نن يو بل ته په قار نه دي

ټول په ځان شوي دي جنګونو ته وزګار نه دي

ټول طبيبان ئې نن دردونو له دوا لټوي

واړه لګيا دي څه دارو ددې وبا لټوي

خلک اوس خېر د انسان غواړي مسيحا لټوي

ددې وبا سره مو دا منظر په څنګ کښې وليد

چې د مودو نه پس فطرت مو په خپل رنګ کښې وليد

طیب اللہ خان

اسلام اباد

فطرت کا رنگ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

باہر بہار ہے اور انسان سارے گھروں میں بیٹھے ہیں

بڑے آرام سے شور و شر سے دور بیٹھے ہیں

کچھ اپنے شوق سے اور چند مجبور ہو کے بیٹھے ہیں

شکار سے تھکے ہوئے گھروں میں سستا رہے ہے

پرندے خوش ہیں اور امن میں ارام سے ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آج موٹروں اور بھٹیوں کا وہ دھواں نہیں ہے

بارود خاموش ہے اور جنگ کا ویسا ماحول نہیں ہے

ہوائیں صاف ہو گئیں ہیں اور حبس کا وہ احساس نہیں ہے

بارش نے درختوں، پتوں اور پودوں کو دھو ڈالا اور

پاک اور ہرے چمک رہے ہیں

ریدی اور غانٹول کے پھول بھی دھل گئے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جس نے سارے ماحول کو جھلسا دیا تھا

وہ آگ خاموش ہے

لاریوں او انجنوں کا بے ہنگم شور خاموش ہے

طاقتوروں کے شور و غوغا کا زور خاموش ہے

جنگ کی دھمکیاں آج ایک دوسرے کو نہیں ڈرا رہی ہیں

سب کو اپنی فکر پڑی ہے جنگوں کے لئے کوئی فارغ نہیں ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سارے طبیب آج درد کی دوا ڈھونڈ رہے ہیں

سارے اس وبا کا علاج ڈھونڈنے میں مگن ہیں

لوگ اب انساں کی خیر مانگتے ہیں اور مسیحا ڈھونڈ رہے ہیں

اس وبا کے دوران ہم نے یہ منظر بھی دیکھا

کہ بڑی مدت کے بعد فطرت کو اپنے اصل رنگ میں دیکھ لیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Comments are closed.